فنگر پرنٹس کا معاملہ‘ دیہاتی خواتین کفالت سنٹرز سے خالی ہاتھ واپس

      فنگر پرنٹس کا معاملہ‘ دیہاتی خواتین کفالت سنٹرز سے خالی ہاتھ واپس

  

نورپورنورنگا (نامہ نگار) ا نورپورنورنگا سمیت تمام دیہاتی علاقوں میں قائم احساس امداد سنٹرزپر مستحق خواتین کا فنگر پرنٹ کا بڑا مسئلہ سامنے آنا شروع ہو گیا ہے،دیہات میں رہنے والی خواتینِ چونکہ سارادن کام کاج کرتی رہتی ہیں اس لیئے ان کے ہاتھوں کے نشاں مدہم ہوگئے ہیں جس کی وجہ سے احساس سنٹرز پر موجود ریٹیلرز حضرات کے پاس جو ڈیوائس ہیں وہ فنگر(بقیہ نمبر39صفحہ6پر)

پرنٹ اسیپٹ ہی نہیں کر رہئیں،جس کی وجہ سے کئی دنوں سے مستحق خواتین ساراسارادن بھوکی پیاسی سنٹرز پر گزار کر خالی ہاتھ شام کو واپس جانے پر مجبور ہوجاتی ہیں،اس بارے میں جب بینظیر انکم سپورٹ پروگرام بھاولپور کی اسسٹنٹ ڈائریکٹر میڈم زاہرہ سے اس مسئلہ کا حل پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھاکہ کہ واقعی دیہاتی علاقوں کے سنٹرز پر یہ مسئلہ آرہا ہے،جس کیلئے ہم خواتین کو بتارہیئے ہیں کہ ہاتھوں پر کریم اور لیموں لگائیں،ایک دو دن میں انگلیوں کے نشان ابھر کر واضح ہوجائیں گے،اس کے علاؤہ دوسرا حل یہ ہے کہ نادرا سے ویریفکییشن کروائیں،لیکن چونکہ اس وقت نادرا دفاتر بند ہیں،دفاتر کھلنے پر ہی یہ سب کچھ ہوسکے گا،خواتین نے نادرا حکام سے اپیل کی کہ احساس کفالت سنٹرز پر نادرا ڈیسک قائم کیئے جائیں تاکہ فنگر پرنٹ کی ویریفکییشن ہوسکے۔

واپس

مزید :

ملتان صفحہ آخر -