کراچی، حیدرآباد کے مہاجر فاقہ کشی کا شکا رہیں: ڈاکٹر سلیم حیدر

    کراچی، حیدرآباد کے مہاجر فاقہ کشی کا شکا رہیں: ڈاکٹر سلیم حیدر

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) مہاجر اتحاد تحریک کے چیئرمین ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہا ہے کہ صوبائی کراچی، حیدرآباد سمیت شہری علاقوں میں کاروبار اور صنعتیں بند کرانے میں تو مستعدد کا مظاہرہ کرتی ہے لیکن اربوں روپے کے راشن میں سے چند ہزار روپے کا راشن بھی ان شہروں کے متاثرہ افراد کو نہیں دیا جارہا۔ جبکہ سندھ میں سبب سے زیادہ متاثر حیدرآباد اور کراچی کے مہاجر عوام ہیں جن کا کاروبار ایک ماہ سے بند ہے اور وہ گھروں میں محصور بنادیئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ جب بھی قدرتی آفت آتی ہے تو تمام تر مراعات دیہی علاقوں کے سندھی النسل افراد کو دی جاتی ہے، ان ہی کو قرضے دیئے جاتے ہیں ان ہی کے قرضے معاف کئے جاتے ہیں، ان ہی کو بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے نام پر برسوں سے پیسے دیئے جارہے ہیں لیکن کراچی، حیدرآباد سمیت شہری علاقوں کے مہاجروں کا خون نچوڑ کر ان سے ٹیکس وصول کئے جاتے ہیں لیکن انہیں کسی طرح کی مالی مدد کرنے کو حکومت تیار نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سمیت پیپلزپارٹی کی قیادت، وزراء اور اراکین اسمبلی کورونا وائرس کے نام پر اربوں روپے کی کرپشن کرچکے ہیں جس پر سپریم کورٹ تک میں ان کی سرزنش کی ہے لیکن پیپلزپارٹی کی حکومت اس تمام کے باوجود اپنی ہٹ دھرمی اور مہاجر دشمنی چھوڑنے کو تیا رنہیں، مہاجر معاشی طورپر بدحالی کا شکا رہیں خاص طورپر کاروباری طبقہ اور مزدوری کرنے والے فاقہ کشی کا شکار ہورہے ہیں، حکومت عملی اقدامات کرنے کے بجائے کمروں میں بیٹھ کر احکامات جاری کررہی ہے۔ اگر اسی طرح سب کچھ کیا جاتا رہا تو پھر مہاجر یہ سمجھنے میں حق بجانب ہوں گے کہ کراچی پر مسلط کردہ غیر مہاجر حکومت صرف اور صرف مہاجروں کو تباہ وبرباد کرنا چاہتی ہے اور اسی ایجنڈے کے تحت مہاجروں کی نسل کشی کی جارہی ہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -