کرونا وائرس،وکلاء کی بڑی تعداد مالی مشکلات کا شکار، سینکڑوں کیس کی سماعت متاثر

کرونا وائرس،وکلاء کی بڑی تعداد مالی مشکلات کا شکار، سینکڑوں کیس کی سماعت ...

  

لاہور(نامہ نگار)کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے خطرہ کے پیش نظر ماتحت عدالتوں میں حفاظتی اقدامات کے باعث صرف اہم نوعیت کے مقدمات کی سماعت کی جارہی ہے،روزانہ کی بنیاد پر سیکڑوں کیسوں کی سماعت نہ ہونے سے خصوصاًنوجوان اور خواتین کے علاوہ دیگروکلاء کی بڑی تعداد مالی مشکلات کا شکار ہوگئے ہیں۔ اس حوالے سے وکلاء میاں داؤد، مدثر چودھری،مرزاحسیب اسامہ، مجتبیٰ چودھری سمیت دیگر نے پاکستان سے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ کرونا وائرس کے باعث ملک بھر میں لاک ڈاؤن کے سبب ماتحت عدالتوں میں بھی حفاظتی اقدامات کے پیش نظرعام مقدمات کی سماعتیں نہیں ہورہیں۔

،ایک طرف تو یہ انسانی جان کو بچانے کے لئے اچھا اقدام ہے لیکن یہ امر بھی قابل ذکرہے کہ بہت سے وکلاء کا روزگار اس سے متاثر ہواہے، حکومت کی جانب سے جس طرح لوگوں کی امداد کے اعلانات کئے گئے ہیں،افسوس کے ساتھ وکلاء کو یکسر اس حوالے سے نظر انداز کیا گیاہے،وکلاء کا کہناہے کہ حکومت کو چاہیے کہ وہ فوری طور پرمتاثروکلاء کے لئے بھی مالی امداد کا اعلان کرے تاکہ انہیں درپیش مسائل کا ازالہ ہوسکے،علاوہ ازیں کرونا وائرس کے پیش نظر ماتحت عدالتوں میں متعدد مقدمات میں ملزموں کو پیش نہیں کیاجارہا جس کی وجہ سے ان مقدمات میں پیش رفت نہیں ہورہی،جن میں پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز، سابق وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف سمیت دیگر اہم افراد کے مقدمات شامل ہیں،واضح رہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے خدشہ کے پیش نظر زیر حراست ملزمان کو جیلوں سے رواں چوتھے ہفتے میں بھی ماتحت عدالتوں میں پیش نہیں کیا جائے گا۔فوجداری،منشیات سمیت دیگر ملزمان کے مقدمات کو بغیر کاروائی ملتوی کیا جا رہا ہے، اس سلسلے میں جیل حکام نے سیشن جج لاہور اور نیب عدالت کے ایڈمن جج کو آگاہ کردیاہے،یاد رہے کہ زیرحراست ملزمان کو جیلوں میں 15 مارچ سے پیش نہیں کیا جا ر ہا جبکہ زیرحراست ملزمان کے مقدمات میں گواہوں کے بیانات بھی قلمبند نہیں ہورہے۔

مزید :

علاقائی -