سکیورٹی خدشات کے باعث،گلو بٹ کوضمانت کے باوجود رہا نہ کیا جا سکا

سکیورٹی خدشات کے باعث،گلو بٹ کوضمانت کے باوجود رہا نہ کیا جا سکا

  

لاہور(کرائم سیل)سکیورٹی خدشات کے پیش نظر سانحہ ماڈل تاﺅن کے مرکزی ملزم گلو بٹ کو خصوصی عدالت کی جانب سے مقدمہ میں ضمانت کے احکامات جاری ہونے کے باوجود رہا نہ کیا جا سکا۔مذکورہ ملزم کو جیل میں ہی ایک ماہ کے لیے نظر بند کرنے کے احکامات جاری کر دیئے گئے ہیں۔پنجاب حکومت نے گلو بٹ کی جان کو خطرہ کے پیش نظر نظر بندی کے احکامات جاری کیے ہیں۔تفصیلات کے مطابق ۔گزشتہ روزگلوبٹ کی جانب سے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نمبر 4 کے جج رائے ایوب مارتھ کے روبرو ایک لاکھ کا مچلکہ جمع کروادیا گیاہے۔یاد رہے کہ لاہور ہائی کورٹ میں گلوبٹ نے اپنے وکیل کی وساطت سے انسداددہشت گردی کی خصوصی عدالت سے درخواست ضمانت خارج ہونے پرضمانت کی اپیل دائر کررکھی تھی تاہم لاہورہائی کورٹ نے سماعت کے بعدملزم گلوبٹ کی درخواست ضمانت ایک لاکھ روپے کے مچلکے کے عوض منظورکرتے ہوئے اسے رہاکرنے کاحکم جاری کردیاتھا لیکن روبکار جاری نہ ہو سکنے پر گلو بٹ رہا نہ ہو سکا۔گزشتہ روزگلوبٹ کی جانب سے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں عدالت عالیہ کے حکم پر مچلکے داخل کروا دیے گئے جس کے بعد عدالت نے گلوبٹ کی رہائی کے لئے روبکار جاری کردی گئی۔

مزید :

علاقائی -