عمران خان اور قادری لشکر اسلام آباد پہنچ گئے ،الگ الگ دھرنا

عمران خان اور قادری لشکر اسلام آباد پہنچ گئے ،الگ الگ دھرنا

  

                    اسلام آباد (خصوصی رپورٹ) وفاقی دارالحکومت میں سیاسی گرمیوں کا فائنل راو¿نڈشروع ہو گیا، انقلاب اور آزادی مارچ منزل پر پہنچ گئے۔ آبپارہ میں تحریک انصاف کے کارکنوں کا جوش وخروش قابل دیدتھالاہور سے شروع ہونے والا تحریک انصاف کا آزادی مارچ اور عوامی تحریک کا انقلاب مارچ اسلام آباد پہنچ گئے ہیں۔ آبپارہ چوک میں تحریک انصاف اور زیرو پوائنٹ پر عوامی تحریک کے پنڈال میں کارکن پ±رجوش ہیں۔ اسلام آباد میں سیاسی میدان لگ گیا۔ آزادی اور انقلاب مارچ کے کارواں اپنی منزل پر پہنچ گئے۔ اسلام آباد میں کارکنوں کا جوش وخروش دیکھنے لائق ہے۔ بارش بھی ورکروں کا جنون کم نہ کر پائی۔ تحریک انصاف کا پنڈال آبپارہ بنا ہے۔ کہیں پارٹی پرچم لہرائے جا رہے ہیں۔ ٹولیوں کی صورت میں کارکن پارٹی ترانوں پر رقص کر رہے ہیں۔ کارکن جوش بڑھانے کے لئے نعرے بھی لگائے جا رہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک بھی کارکنوں میں موجود رہے اور کنٹینر کی ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھ کر چائے کی چسکیاں اور سگریٹ کے کش لیتے رہے۔ زیرو پوائنٹ پر عوامی تحریک کے کارکن بھی پ±رجوش ہیں۔ نعرہ بازی اور رقص جاری وساری ہے۔ خواتین کارکنوں نے پارٹی پرچم اٹھا رکھے ہیں اور ان کے جذبہ بھی کسی سے کم نہیں۔ شہر اقتدار اس وقت اپوزیشن کے کارکنوں سے بھر چکا ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ عمران خان اور طاہر القادری کا دھرنا اپنے مقاصد حاصل کر سکے گا یا نہیں۔ دریں اثناعوامی تحریک کے جلسہ گاہ کا مقام تبدیل کر دیا گیا۔ عوامی تحریک کو زیرو پوائنٹ کے بجائے خیابان سہروردی پر جلسے کی اجازت دیدی گئی۔ اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ اور عوامی تحریک کے درمیان مذاکرات کامیاب ہو گئے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ نے عوامی تحریک کا جلسہ گاہ کا مقام تبدیل کرتے ہوئے انھیں زیرو پوائنٹ کے بجائے خیابان سہروردی پر جلسے کی اجازت دیدی ہے۔ واضع رہے کہ عوامی تحریک اور اسلام ا?باد کی انتظامیہ کے درمیان دھرنے کے مقام پر تنازع پیدا ہو گیا تھا۔ طاہر القادری نے فیصل ایوینو پر جلسہ کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ علامہ ڈاکٹر طاہر القادری نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ انتظامیہ جہاں جلسے کیلئے جگہ دینا چاہتی ہے وہاں اسلام ا?باد ختم ہوتا ہے۔ ہم نے جنگل میں جلسہ کرنے کی انتظامیہ کی پیشکش مسترد کر دی ہے۔ انتظامیہ نے ہمارے تینوں مقامات کیلئے اجازت نہیں دی۔ انتظامیہ کو امن برقرار رکھے کیلئے جگہ دینا پڑے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ امن اور خیر حکومت کے ایجنڈے میں شامل نہیں ہے۔ حکومت خیر اور امن کیساتھ کوئی کام نہیں کرنا چاہتی - ادھر محکمہ موسمیات نے نوید سنائی ہے کہ اسلام آباد میں آئندہ دو روز تک تیز ہواو¿ں اور گرج چمک کے ساتھ مزید بارش متوقع ہے - تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کا لاہور سے شروع ہونے والا آزادی مارچ گوجرانوالہ میں مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں سے تصادم کے بعد گجرات، لالہ موسیٰ، سرائے عالمگیر اور گوجر خان سے ہوتا ہوا رات گئے اسلام آباد پہنچ گیا جبکہ پاکستان عوامی تحریک کا انقلاب مارچ اس سے چند گھنٹے پہلے پہنچا۔تفصیل کے مطابق تحریک انصاف کا آزادی مارچ عمران خان کی قیادت میں لاہور سے طویل مسافت کے بعد اسلام آباد پہنچ گیا ہے۔موٹر سائیکلوں، گاڑیوں اور بسوں پر سوار جوش سے بھرے کارکن نعرے لگاتے ہوئے قافلے کے ساتھ چل رہے تھے۔ گاڑیوں کی لمبی قطاریں، لہراتے پارٹی جھنڈے، گونجتے ترانے اور نعرہ لگاتا ہوا تحریک انصاف کا آزادی مارچ جی ٹی روڈ پر گامزن رہا، مرد اور خواتین کارکنوں کا ولولہ اور جوش دیکھنے لائق تھا، اس سے پہلے لاہور سے گوجرانوالہ پہنچنے پر آزادی مارچ کا شاندار استقبال کیا گیا، مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں کے پتھراﺅ اور تصادم کے بعد آزادی مارچ گوجرانوالہ سے روانہ ہوا تو اس کی رفتار تیز ہو گئی۔ قافلے کا گجرات ،لالہ موسیٰ ،سرائے عالمگیر اور دیگر شہروںمیں شانداراستقبال کیا گیا۔ گجرات میں آزادی مارچ کے شرکاءکو کھانے کے پیکٹ بھی دیئے گئے۔ کارکنوںنے گاڑیوں پر پھول نچھاور کئے۔ جوش وجذبے سے بھرے کارکن بھنگڑے ڈال کر لہو گرماتے رہے۔ کھاریاں سے آگے قافلے کو موسلادھار بارش نے آ لیا لیکن مارچ نہ رکا۔ جہلم میں تیز بارش کے باوجود کارکنوں کا جنون کم نہ ہوا، بھیگے ہوئے موسم میں آزادی مارچ کا بھرپور استقبال کیا گیا۔ اسلام آباد جوں جوں قریب آتیا گیا،تحریک انصاف کے کارکنوں کا جوش بڑھتا گیا۔دریں اثناءپاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ ملک میں مہنگائی ،لوڈ شیڈنگ اور بے روزگاری سے عوام کا برا حال ہے، وہ اسلام آباد میں نواز شریف کی بادشاہت ختم کر نے جارہے ہیں ،ملک میں پہلی دفعہ الیکشن میں بدترےن دھاندلی کی گئی اور الیکشن کے نتائج بدل دیے گئے حکومت نے لانگ مارچ روکنے کے لیے تمام اوچھے ہتھکنڈے استعمال کیے ،ہیلی کاپٹر سے کیل پھینک کر گاڑیوں کے ٹائر پنکچر کیے گئے مگر ہمارے حوصلے بلند ہیں ،منزل حاصل کر کے اور فرعونیوں کی حکومت ختم کر کے ہی دم لیں گے ان خیالا ت کا اظہار انہوں نے گوجرانوالہ پہنچنے پر مقامی قائد بےرسٹر علی اشرف مغل کی رہائشگاہ پر شرکا ءسے خطاب کے دوران کیا۔ عوامی مسلم لیگ کے قائد شیخ رشید ،مرکزی رہنما پی ٹی آئی ،مخدوم جاوید ہاشمی ،شاہ محمود قریشی ،عندلیب آفتاب سمیت مرکزی اور صوبائی رہنماو¿ں کے علاوہ پی ٹی آئی کے کارکن ہزاروں کی تعداد میں موجود تھے ۔مقامی ایم پی اے کے حامیوں اور لیگی کارکنوں کی طرف سے بس سٹاپ ،لاری اڈہ اور شاہین آباد کے قریب پتھراو¿ کر نے راستہ روکنے کی شدید مذمت کر تے ہوئے عمران خان نے یہاں میڈیا سے گفتگو کر تے ہوئے کہا کہ ہم بہنوں ،بچوں ،ماو¿ں اور بزرگوں کو ساتھ لے کر پر امن مارچ کر رہے ہیں تصادم ہرگز نہیں چاہتے ،ہمارے کارکن پر امن ہیں اور پر امن ہی رہیں گے اور پر امن رہ کر اسلام آباد جا ئیں گے ،انہوں نے کہا کہ وہ پر امن ہیں اور شریف برادران فرعون بن گئے ہیں ملک کو تباہی کی طرف دھکیلا جا رہا ہے ہم پر پتھراو¿ کیا گےا مگر ہم پر عزم اور صابر لوگ ہیں ،منفی ہتھکنڈوں کا جواب ہرگز منفی نہیں دیں گے ، پولیس کی موجودگی میں انکے قافلے کا نہ صرف راستہ روکا گےا بلکہ گولیاں برسائیں ،پتھراو¿ کیا گےا جن سے ان کے متعد د ساتھی زخمی ہوگئے ۔عوامی مسلم لیگ کے قائد شیخ رشید احمد نے اس موقع پر خطاب کر تے ہوئے کہا کہ حکومت سے سیکورٹی فراہم کر نے کی اپیل نہیں کریں گے، معاملہ اللہ پر چھوڑدیا ہے ،ملک میں خانہ جنگی کی فضا قائم کی جارہی ہے جو ملک کی جڑوں میں بےٹھ جائے گی، پی ٹی آئی رہنما جہانگےر ترین نے کہا کہ گلو بٹوں نے غنڈہ گردی کی انتہا کر دی ہے اور پولیس انہیں سیکورٹی فراہم کر رہی ہے ،حکومت عوام کے ٹھاٹھیں مارتا سمندر کو دیکھ کر بوکھلا گئی ہے، پی ٹی آئی رہنما عندلیب عباس نے کہا ہے کہ پتھراو¿ ،گولیاں ہمارا راستہ نہیں روک سکتے بلکہ غنڈہ گردی اور دہشت گردی کا ڈٹ کر مقابلہ کریں گے۔ تحریک انصاف کی مرکزی رہنما اور ترجمان شیریں مزاری نے کہا کہ لیگی کارکنوں نے ایک باقاعدہ سازش اور منصوبے کے تحت گوجرانوالہ میں ان کا راستہ روکا ہے حکومت کو ختم کر کے دم لیں گے، پولیس ہمیں سیکورٹی فراہم کر نے کی بجائے لیگےوں کو تحفظ فراہم کر تی رہی جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے پی ٹی آئی کے مارچ کے گوجرانوالہ پہنچنے پر مقامی قائدین بھی چھوٹے چھوٹے قافلوں کی صورت میں لانگ مارچ میں شامل ہو گئے اور پولیس کی بھاری نفری کی موجودگی میںقافلہ گوجرانوالہ سے ہوتا ہو ا اسلام آباد چلاگیا۔اسلام آباد پہنچ گیا ہے اور اسے زیرو پوائنٹ پر جلسہ کرنے کی اجازت مل گئی ہے،لاہور سے شروع ہونے والے انقلاب مارچ کے شرکاءکا گوجرانوالہ، گجرات، کھاریاں، سرائے عالمگیر اور جہلم پہنچنے پر شاندار استقبال کیا گیا۔ گجرات میں چناب پل پر مسلم لیگ (ق) کی مقامی قیادت اور کارکنوں نے شرکاءمیں کھانا بھی تقسیم کیا۔ انقلاب مارچ کے متعدد شرکاءگیس ماسک، ہیلمٹ اور ڈنڈوں سے لیس ہیں۔ بسوں، کاروں اور موٹر سائیکلوں پر نکلنے والے قافلے میں پرجوش کارکن پارٹی پرچم لہراتے اور نعرہ بازی کرتے رہے۔ مسلم لیگ (ق) کے رہنماءپرویز الہیٰ اور دیگر رہنماءبھی اپنے کارکنوں کے ہمراہ انقلاب مارچ کے شریک سفر رہے۔ طاہر القادری کا وقفے وقفے سے ہونے والا خطاب کارکنوں کا جوش و خروش بڑھاتا رہا۔ کھاریاں میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے طاہر القادری نے کہا کہ عوامی تحریک کا انقلاب مارچ مکمل طور پر آئینی اور پ±رامن ہے۔ حکمرانوں نے جو کیا کیا وہ آئینی ہے؟۔ ضمانت دیتے ہیں کہ ملک میں مارشل لاءنہیں لگ سکتا۔ طاہر القادری نے فیصل ایوینو پر جلسہ کرنے سے انکار کر دیا۔ پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ علامہ ڈاکٹر طاہر القادری نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ انتظامیہ جہاں جلسے کیلئے جگہ دینا چاہتی ہے وہاں اسلام آباد ختم ہوتا ہے۔ ہم نے جنگل میں جلسہ کرنے سے متعلق انتظامیہ کی پیشکش مسترد کر دی ہے۔ انتظامیہ نے ہمارے تینوں مقامات کیلئے اجازت نہیں دی، اسے امن برقرار رکھے کیلئے جگہ دینا پڑے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ امن اور خیر حکومت کے ایجنڈے میں شامل نہیں ، وہ خیر اور امن کیساتھ کوئی کام نہیں کرنا چاہتی ۔

مزید :

صفحہ اول -