لالچی چچا کم عمر بھتیجی کا بیٹے سے نکاح کرانے میں کامیاب ہوگیا

لالچی چچا کم عمر بھتیجی کا بیٹے سے نکاح کرانے میں کامیاب ہوگیا
لالچی چچا کم عمر بھتیجی کا بیٹے سے نکاح کرانے میں کامیاب ہوگیا

  

اوکاڑہ ( نامہ نگار ) حجرہ شاہ مقیم میں لالچی چچا کم عمر بھتیجی کانکاح بیٹے سے کرا نے میں کامیاب ہوگیا لیکن کم عمری کی شادی پر پولیس نے تاحال کوئی کارروائی نہیں کی، لڑکی لاہور سے اپنی والدہ کے ہمراہ رشتہ داروں کی شادی میں شرکت کیلئے آئی تھی ۔

تفصیلات کے مطابق نواحی گاؤں قلعہ یوسف بھٹی میں عمران شیخ نامی دولہے کی شادی میں شرکت کیلئے گاؤں کماہاں لاہور سے 13/14سالہ رافعہ بی بی دختر محمد اشرف قوم مسلم شیخ اپنی والدہ کیساتھ آئی، شادی والے گھر گاؤں ارزانی پور تحصیل چونیاں کارہائشی لڑکی کاسگا چچا نیامت علی شیخ بیٹے صفدر علی کے ہمراہ موجود تھا ،سب مہمان سوگئے تولڑکی اپنے کزن صفدر کیساتھ شادی والے گھر سے فرار ہوکر قصور دیپال پور روڈ پر آگئی ،کم عمر جوڑے کو پولیس چوکی راجووال کے ڈرائیور نے شک ہونے پر روک لیالیکن لڑکے نے والد نیامت سے رابطہ کیا جس پر مقامی زمیندارشوکت کی مدد سے پولیس اہلکار کی مٹھی گرم کی اور کم عمر جوڑے کو قلعہ سوندھا اپنے رشتہ داروں کے پاس لے گیا ۔

لڑکی کے اغواء کی خبر بھی روزنامہ پاکستان ہی سامنے لایاتھا ، تفصیلات کیلئے یہاں کلک کریں۔

بااثر زمیندار نے ملازموں کے بھائی کو قانونی پیچیدگیوں سے بچانے کیلئے ایک وکیل سے رابطہ کیا جس نے تین دن بعد کم عمر جوڑے کا تحصیل دیپال پور میں نکاح کرادیا۔رافعہ بی بی سات بھائیوں کی اکلوتی بہن ہے جبکہ جائیداد کے لالچ میں چچا نے اپنی بھتیجی کو زبردستی بہوبنالیا لیکن کم عمر ی کی شادی پر قانون نافذ کرنیوالے ادارے اطلاع کے باوجود حرکت میں نہیں آئے ۔

مزید : جرم و انصاف