امریکی پولیس نے منشیات سمگلنگ کرنے والے کبوترکو گرفتار کر لیا

امریکی پولیس نے منشیات سمگلنگ کرنے والے کبوترکو گرفتار کر لیا
امریکی پولیس نے منشیات سمگلنگ کرنے والے کبوترکو گرفتار کر لیا

  

واشنگٹن (اے این این) بھارت کے بعد امریکہ میں بھی کبوتر کے چرچے شر وع ہو گئے ہیں کیونکہ امریکی پولیس نے ایک ایسے کبوتر کو پکڑ لیا ہے جو منشیات سمگل کرتا تھا۔ تفصیلات کے مطابق پولیس نے سان رافیل ڈی الاہیولہ شہرمیں واقع ایک جیل کی چھت سے ایک ایسے کبوترکو حراست میں لے لیا ہے جس کے ذریعے منشیات سمگل کی جاتی تھیں، پولیس نے اس کبوترکی تصاویرآن لائن پوسٹ کرتے ہوئے اسے ڈرگ ڈوو یا منشیات کبوتر قراردیا ہے۔

کبوتر کے سینے پر زپ والی ایک چھوٹی تھیلی لگی تھی جس میں کچھ منشیات موجود تھی جس میں 14 گرام کوکین اور اتنی ہی مقدارحشیش کی تھی۔ کوسٹاریکا وزارتِ انصاف نے اس کی تصاویر کے ساتھ تفصیلات فراہم کی ہیں جس کے مطابق منشیات کی قیمت 280 ڈالریا 28 ہزارپاکستانی روپے ہیں۔

پولیس کو شبہ ہے کہ جیل میں موجود کسی قیدی نے منشیات کیلئے اس کبوترکو خصوصی تربیت فراہم کی ہے جو کسی ڈاکئے کی طرح 2 مقامات پرآتا جاتا رہتا ہے اورمنشیات منتقل کرتا ہے۔ پولیس چیف نے بتایا کہ اس سے قبل کتوں اور بلیوں کو بھی منشیات کی نقل و حمل کیلئے استعمال کیا جاتا رہا ہے اور اب لگتا ہے کہ وہ باہرسے نشہ آوراشیا بھیجنے کیلئے کبوتروں کا سہارا لے رہے ہیں کیونکہ اس سے قبل کولمبیا میں 2011ء اورارجنٹائن میں 2013 ء میں کبوتروں کو اسی مقصد کیلئے استعمال کیا گیا تھا۔

پولیس نے کبوتر کو پکڑنے کے بعد اسے ایک چڑیا گھر کے پنجرے میں رکھ دیا ہے جہاں جانوروں کے ماہرین نے اس کا معائنہ کرکے بتایا کہ کبوتر کو چھوٹا وزن کئی میل تک لے جانے کی تربیت دی گئی ہے۔واضح رہے کہ جنگ عظیم دوم میں قریباً ڈھائی لاکھ کبوتروں کو پیغام رسانی کیلئے استعمال کیا گیا تھا جو میدانِ جنگ میں خفیہ پیغام رسانی کا کام کرتے تھے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس