ججوں کی خالی نشستوں پرتعیناتی کیلئے کارروائی شروع کردی،چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

ججوں کی خالی نشستوں پرتعیناتی کیلئے کارروائی شروع کردی،چیف جسٹس لاہور ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ مسٹر جسٹس سید منصور علی شاہ نے قرار دیا ہے کہ عدالت عالیہ میں ججوں کی خالی نشستیں پر کرنے کے لئے کارروائی شروع کردی گئی ہے ،ججوں کی نئی تعیناتیوں میں شفافیت کو یقینی بنانے کے لئے امیدواروں کے انٹرویو کئے جائیں گے۔فاضل جج نے یہ ریمارکس ہائی کورٹ کے ججوں کی خالی اسامیوں پر تعیناتیوں کے لئے دائر درخواست کی سماعت کے دوران دیئے ۔یہ درخواست سینئر وکیل اے کے ڈوگر نے دائر کررکھی ہے ۔درخواست گزار نے عدالت کے روبرو دلائل دیتے ہوئے کہا کہ آئین کے تحت چیف جسٹس اور ججز مل کر عدالت عالیہ بنتے ہیں جبکہ قوانین اور عدالتی فیصلوں کے مطابق اعلی عدلیہ کے جج کی خالی نشست کو تیس یوم میں مکمل کرنا لازم ہے، آئین کے برعکس اس وقت بھی عدالت عالیہ لاہور میں صرف47 جج موجود ہیں جبکہ 13خالی نشستوں کو پر نہیں کیا جا رہا،اخباری اشتہار کے بغیر ججوں کی خالی نشستوں کو پر کر لیا جاتا ہے، جس سے غریب اور اہل امیدوار جج کے عہدے سے محروم رہ جاتے ہیں جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ پہلی مرتبہ ضلعی بار سے لے کر پاکستان بارکونسل سے ججز کی تعیناتیوں کے لئے اہل امیدواروں کے نام مانگے گئے ہیں،بار ایسویسی ایشنز نے 255نام بھجوا دئیے ہیں۔ جن میں سے 182امیدوار وکلاء نے اپنے پرفارمے بھی مکمل کرکے بھجواء دئیے ہیں۔امیدواروں کے انٹرویوز کے بعد شارٹ لسٹنگ کی جائے گی اوراس فہرست میں شامل امیدواروں کے نام بار ایسویسی ایشنز کو واپس بھجوا کر ان ناموں پر تحفظات مانگے جائیں گے.۔ججز کی تعیناتیوں کے عمل کو شفافیت کے ساتھ مکمل کرنے کے بعد ہی نام جوڈیشل کمیشن کو بھجوائے جائیں گے۔چیف جسٹس نے کہا کہ عدالت عالیہ میں فوجداری،دیوانی اور آئینی نوعیت کے مقدمات زیر التواء ہیں ،اچھی شہرت اور قابلیت کے علاوہ زیرالتواء مقدمات کو نمٹانے کی صلاحیت رکھنے والے امیدواروں کے نام بھی جوڈیشل کمشن کو بھجوائے جائیں گے ۔عدالت نے اس کیس کی مزید سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی کردی ہے ۔

مزید : صفحہ آخر