چھٹیاں ختم،سکولوں میں اساتذہ اوربچوں کی حاضری انتہائی کم

چھٹیاں ختم،سکولوں میں اساتذہ اوربچوں کی حاضری انتہائی کم

لاہور(خبرنگار)صوبائی دارالحکومت سمیت پنجاب بھر میں موسم گرما کی چھٹیاں ختم ہونے پر سرکاری سکولوں میں بچوں کے ساتھ اساتذہ کی حاضریاں بھی انتہائی کم رہیں ،متعدد سکولوں میں ہیڈ اساتذہ سمیت اساتذہ گھر وں پر آرام کرتے رہے۔ لاہور کے 1253 سکولوں میں سے اکثر سکولوں میں جہاں اساتذہ غائب رہے وہاں موسم گرما کی چھٹیاں ختم ہوتے ہوہی سکولز کھلنے کے پہلے روز بچوں کی حاضری انتہائی کم رہیں، پنجاب جہاں محکمہ تعلیم کے افسران کی تمام تر کوششوں کے باوجود سکولوں میں اساتذہ اور بچوں کی تعداد کم ریکارڈ کی گئی وہاں لاہور میں بھی اکثر سکولوں میں اساتذہ اور بچوں کی تعداد انتہائی کم رہی جس پر سیکرٹری تعلیم عبدالجبار شاہین اور ڈی پی آئی سکولز سمیت ای ڈی او لاہور خود حرکت میں آ گئے۔ اس موقع پر ای ڈی او لاہور کے حکم پر سکولوں میں چھاپے مارے گئے تو پچاس سے زائد سرکاری سکولوں میں اساتذہ غائب پائے گئے جبکہ سکولوں میں بچوں کی تعداد بھی 25سے 30فیصد کم پائی گئی جبکہ بعض سکولوں میں پچاس فیصد بچے سکول ہی نہیں آئے ،اس موقع پر ڈی ای اوز اور ڈپٹی ڈی اوز چھاپے مارتے رہے ، ہیڈ ماسٹرز اور اساتذہ کو محض شو کاز کا نوٹس دے کر اوپر سب اچھے کے رپورٹ دی گئی۔ لیکن اس کے برعکس سکولو ں میں حاضری انتہائی کم ریکارڈ کی گئی دوسری جانب ڈی ای اوز کے ساتھ ڈی ایم اوز کی ٹیموں نے بھی سکولوں میں چھاپے مارے جس میں اساتذہ اور بچوں کی کم تعداد پر سکولوں کے سربراہوں کے خلاف کارروائی کی سفارش کی گئی جس میں اساتذہ کی دن بھر شامت رہی، ڈی ای او ایلیمنٹری کے30سکولوں پر چھاپے، ہیڈ ماسٹر سمیت3کو شوکاز نوٹسز جاری کردیئے۔ محکمہ سکولز ایجوکیشن لاہور نے شکنجہ سخت کرتے ہوئے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر ایلیمنٹری کینٹ شیخ حسنات نے6جبکہ ڈپٹی ڈی ای و اور اے ای او ایجوکیشن پر مشتمل ٹیم نے انسپکشن کرتے ہوئے ہنگامی دورے کئے اور ہیڈ ماسٹر سمیت3ٹیچرز کو ناقص صفائی اور عدم توجہی کے باعث پیڈا ایکٹ کے تحت شوکاز نوٹسز جاری کئے ہیں۔ گورنمنٹ ایلیمنٹری سکول کوڑے،ہیڈ ماسٹر نذیر احمد کو ناقص صفائی اور سائنس ٹیچر غلام مصطفےٰ اور شبیر پی ایس ٹی کو جماعت میں ڈسپلن کی خلاف ورزی کرنے پر پیڈا یکٹ کے تحت شوکاز نوٹسز جاری کرتے ہوئے کارروائی شروع کردی گئی ہے۔ای ڈی او لاہور طارق رفیق کے مطابق آج بھی سرکاری سکولوں میں چھاپے مارے جائیں گے اور کوتاہی کے مرتکب اساتذہ اور سکولوں کے سربراہوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

مزید : صفحہ آخر