سکول کونسل میں ممبران کے انتخاب کیلئے اراکین اسمبلی سے مشاورت کی ہدایت

سکول کونسل میں ممبران کے انتخاب کیلئے اراکین اسمبلی سے مشاورت کی ہدایت

لاہور(خبرنگار) صوبائی وزیر تعلیم پنجاب رانا مشہود احمد نے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی ترجیحات میں تعلیم و صحت کی بہتر سہولیات سر فہرست ہیں ، تاریخ میں پہلی مرتبہ تعلیم کے لئے گذشتہ دس سالوں سے 485فیصد زائد بجٹ مختص کیا گیا ہے ، سکولوں میں معیار تعلیم کی بہتری اور طالبعلموں کو بہترین ماحول فراہم کرنے کے لئے 14ارب روپے براہ راست سکولوں کے سربراہان کو دئیے جا رہے ہیں تاکہ وہ اپنی ضروریات کی ترجیحات کا تعین کر کے تعلیمی اداروں کا ماحول بہتر بنائیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جنوبی پنجاب کے دورے کے موقع پر ڈی سی او آفس رحیم یار خان کے کمیٹی روم میں ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس کی صدارت اور ضلع کے مختلف سکولوں کے دورہ کے دوران کیا۔اس موقع پر صوبائی وزیر صنعت و تجارت چوہدری محمد شفیق ، اراکین صو بائی اسمبلی چوہدری اعجاز شفیع، میاں اسلام اسلم، سردار محمد نواز خان رند، مخدوم مسعود عالم، ڈی سی ا وکیپٹن(ر)محمد ظفر اقبال سمیت محکمہ تعلیم کے دیگر افسران موجود تھے۔صوبائی وزیر نے کہا کہ صوبہ بھر میں سکولز کونسل کو فعال کرنے کے لئے تمام سابقہ سکول کونسلز تحلیل کی جا رہی ہیں اور ضلعی انتظامیہ بھی ضلع میں موجود سکول کونسلز کو تحلیل کر کے اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کی مشاورت سے نئے اور فعال ممبران پر مشتمل سکول کونسل کے اراکین کا انتخاب کرے ۔انہوں نے کہا کہ تعلیمی اداروں میں موجود کمپیوٹرز اور مختلف مضامین کی پریکٹیکل لیبزکو فعال کیا جائے اور یہ تمام اشیاء طالبعلموں کے استعمال کے لئے ہیں ان تک طالبعلموں کی رسائی اور رہنمائی بہتر انداز میں کی جائے۔ انہوں نے گورنمنٹ گرلز ہائی سکول خانپور کا تفصیلی دورہ کیا اور وہاں پر ناقص انتظامی ، صفائی اور آپسی اختلافات کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ذمہ داران کے خلاف کارروائی کر نے کی ہدایت کی۔اس موقع پر اراکین اسمبلی چوہدری اعجاز شفیع، میاں اسلام اسلم، مخدوم مسعود عالم، سردار محمد نواز خان رند سمیت دیگر نے اپنے حلقہ انتخاب میں موجود تعلیمی ادار و ں کے مسائل بارے آگاہ کیا اور اس عزم کی یقین دہانی کرائی کے وہ معیار تعلیم پر کوئی سمجھوتا نہیں کریں گے۔قبل ازیں ڈی سی ا وکیپٹن(ر)محمد ظفر اقبال نے ضلع میں موجود تعلیمی اداروں اور دستیاب سہولیات بارے بریفنگ دی۔

مزید : صفحہ آخر