7سالہ بچہ اغوا کے بعد دریا کنارے قتل، 3پڑوسی بچے قاتل نکلے

7سالہ بچہ اغوا کے بعد دریا کنارے قتل، 3پڑوسی بچے قاتل نکلے

عبدالحکیم ، تلمبہ (نمائندہ پاکستان، نامہ نگار، سٹی رپورٹر) 7سالہ بچہ اغوا کے بعد دریائے کنارے قتل، لاش برآمد، 3پڑوسی قاتل نکلے ۔واقعہ کے مطابق 14اگست کو دن 11بجے نواحی علاقہ مانک ہراج کے رہائشی ربنوازہراج کے سات سالہ بیٹے دلاور کو گھر کے باہر سے کھیلتے ہوئے اغوا (بقیہ نمبر33صفحہ12پر )

کرلیاگیا، والدین کو 24گھنٹوں بعددریائے راوی کنارے مغوی بچے کی نعش ملی، ابتدائی رپورٹ کے مطابق موت گلہ دبانے سے ہوئی ہے،بتایا گیا ہے کہ14سالہ سید حسن رضا نے8 سالہ جنید اور11سالہ شعبان کی مدد سے دو خواتین (ن)اور(ش) کی ایما پر 7سالہ دلاور کو گھر کے باہر سے کھیلتے ہوئے بذریعہ موٹرسائیکل اٹھا کر تقریبا 7کلومیٹر دور دریائے راوی کے اندر جاکر گلہ دبا کر قتل کرکے ریت میں دبا دیابعدازاں ملزمان نے واپس آکر مقتول کاواقعہ پھیلادیا کہ نامعلوم کارسواروں دلاور کو اغوا کرکے لے گئے ہیں ۔پولیس تھانہ تلمبہ نے ملزمان حسن اور شعبان کوگرفتار کرلیا ہے جبکہ جنید کے والدین اسے لیکر فرار ہوگئے ہیں مزید 2خواتین کی گرفتاری متوقع ہے۔ملزم و مقتول کا تعلق ہراج خاندان سے ہے،آخری اطلاعات تک مقدمہ درج نہ ہوا تھا ڈی پی او خانیوال بھی تلمبہ پولیس اسٹیشن پہنچ گئے تھے۔پولیس نے پوسٹ مارٹم کے بعد نعش ورثاء کے حوالے کردی ہے۔دریں اثناء ڈی پی او خانیوال جہانزیب نذیرخان نے تھانہ تلمبہ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ مانک ہراج کا رہائشی رب نواز جو کہ فوج میں ملازم ہے کا 7سالہ بیٹا دلاور نواز کل دوپہر سے گھر کے باہر سے غائب ہو گیا تھا اس کے ساتھ کھیلنے والے 5سالہ جمشید نے بتایا تھا کہ دلاور کو ایک کار میں سوار افراد ٹافی دینے کے بہانے اٹھا کر لے گئے ہیں ۔ جس سے علاقے بھر میں خوف و ہراس پھیلا ہوا تھا۔ گزشتہ روز گم شدہ بچے دلاور کی لاش دریائے راوی سے غوث پور کے مقام پر مل گئی جس کو پولیس تھانہ تلمبہ نے قبضے میں لے کر پوسٹ مارٹم کے لیے رورل ہیلتھ سنٹر تلمبہ پہنچا دیا۔تھانہ تلمبہ پولیس نے فوری کاروائی کرتے ہوئے بچے کے گھر قتل کا کھرا ڈالا ایک مشکوک ہمسایہ 16سالہ حسن رضا کو تحویل میں لے لیا تو اس نے اقرار جرم کرتے ہوئے بتایا کہ 10سالہ شعبان ولد خان اور 7سالہ جنید ولد عابد اور میں نے دونوں ساتھیوں کے ورغلانے پر مقتول کو ورغلا کر گھر سے دور لے جا کر گلا دبا دیا اور دریا میں ڈبو کر مار دیا اور بعد میں دریا میں پھینک دیا۔تھانہ تلمبہ پولیس دوملزمان گرفتارکرلیے ہیں جبکہ ایک ملزم جنید کی تلاش شروع کر دی ہے۔ مقتول دلاور کے والد رب نوازنے روتے ہوئے صحافیوں کوبتایا کہ میرے بچے کو شعبان اور جنید کی ماؤں کے اکسانے پر ان لوگوں نے مارا ہے۔ ڈی پی او خانیوال نے کہا کہ معصوم بچے کے قتل کا واقعہ انتہائی افسوسناک ہے اس کیس کی تفتیش سائنسی بنیادوں پر کی جائے تاکہ ملزمان کو سخت سزا دی جا سکے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر