شیلٹر ہوم بھیجنے کے حکم پر پسندکی شادی کرنیوالی لڑکی کی آنکھیں چھلک پڑیں، پھر ایسا انکشاف کہ عدالت نے پولیس بلالی

شیلٹر ہوم بھیجنے کے حکم پر پسندکی شادی کرنیوالی لڑکی کی آنکھیں چھلک پڑیں، ...
شیلٹر ہوم بھیجنے کے حکم پر پسندکی شادی کرنیوالی لڑکی کی آنکھیں چھلک پڑیں، پھر ایسا انکشاف کہ عدالت نے پولیس بلالی

  

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) کراچی کی مقامی عدالت نے پسند کی شادی کرنے والی لڑکی کو شوہر کے ساتھ جانے کی اجازت دے دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق پسند کی شادی کرنے والی فاطمہ نامی لڑکی نے دوران سماعت عدالت میں بیان دیا کہ اس کا زبردستی مذہب تبدیل کراکے شادی کی گئی ہے جس پر عدالت نے حکم دیا کہ معاملہ طے ہونے تک لڑکی کو شیلٹر ہوم بھیجا جائے۔ شیلٹر ہوم بھیجنے کا حکم سننے کے بعد لڑکی زاروقطار روپڑی جس پر جسٹس رسول میمن نے فاطمہ کو ہدایت کی کہ وہ بغیر کسی دباؤ میں آئے بیان دے ۔

زیادہ دن زندہ رہنا چاہتے ہیں تو ان خواتین سے شادی کریں، سائنسدانوں نے واضح کردیا

جج صاحب کی جانب سے حوصلہ افزائی کرنے پر پسند کی شادی کرنے والی لڑکی نے عدالت کے روبرواپنا پہلا بیان بدل لیا اور بتایا کہ والدین کی طرف سے شدید دباؤ ہے اسی لیے پہلا بیان دیا ہے حالانکہ میں شوہر کے ساتھ رہنا چاہتی ہوں۔

عدالت نے لڑکی کو شوہر کے ساتھ جانے کی اجازت دیتے ہوئے کہا کہ عدالت میں موجود لڑکی کے رشتے داروں نے اس پر دباؤ ڈالا ہے اس لیے پولیس لڑکی کو تحفظ فراہم کرے۔

مزید : کراچی