منٹھار، باؤلے کتے کے کاٹنے سے پانچواں بچہ جاں بحق

منٹھار، باؤلے کتے کے کاٹنے سے پانچواں بچہ جاں بحق

  



منٹھار (نامہ نگار) منٹھار کے نواحی گاؤں چک نمبر 224پی میں باؤلے کتے کے کاٹنے سے پانچواں بچہ کامران جاں بحق۔کامران کو شیخ زاید ہسپتال لے جایا گیا مگر ڈاکٹرز نے روایتی بے حسی اختیار کرتے ہوئے کامران کو داخل کرنے سے صاف انکار کر دیا ۔گالیاں اور دھکے مار کر ہسپتال سے باہر (بقیہ نمبر43صفحہ7پر )

نکال دیا۔کامران کے والد واحد بخش کا الزام۔اس وبا سے اونٹ بھینسیں ،گائے،اور سینکڑوں بکریاں بھی مر چکی ہیں ،محکمہ صحت اور ویٹرنری ٹیموں نے متاثرہ چکوک میں جانا اپنی توہین سمجھا۔علاقہ کے باسیوں غلام نبی نمبردار،محمد سلیم بھایا،محمد ہاشم،اللہ ودھایا،اللہ بچایا،حبیب احمد،غلام مصطفی،غلام محمد ،عبداللہ ،اقبال،اکبر،محمد قاسم،عامر سہیل،و دیگران نے وزیراعلی میاں شہباز شریف ،ڈی سی رحیم یار خان سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔متاثرین کا کہنا تھا کہ جب ہم جانوروں کی ویکسئین کیلئے ہسپتال جاتے ہیں تو ہسپتال کا عملہ ویکسئین کروانے کے پیسے منگتا ہے ۔کامران سے پہلے چار بچے اس پر سرار بیماری سے اپنی جان کھو بیٹھے ہیں مگر بیماری کا درست تعین نہ ہو سکا ہے ۔کچھ روز قبل باؤلے کتے نے ایک گائے کو کاٹ لیا تھا جس کو گڑھا کھود کر دفن کر دیا تھا مگر آوارہ کتوں نے اس گائے کو نکال کر کھانا شروع کر دیا۔جس سے باؤلے کا وائرس شدت اختیار کر چکا ہے جانور تو جانور انسان بھی غیر محفوظ ہیں ،گاؤں کے باسیوں کا کہنا تھا کہ جلد از جلد محکمہ صحت کی ٹیمیں بھیجی جائیں ورنہ مزید حلاکتوں کا خدشہ لا حق ہے .

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...