سڑکوں اور گلیوں سے اب تک آلائشیں نہ اٹھائی جا سکیں، کوکب اقبال

  سڑکوں اور گلیوں سے اب تک آلائشیں نہ اٹھائی جا سکیں، کوکب اقبال

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)صارفین کی نمائندہ تنظیم کنزیومرز ایسو سی ایشن آف پاکستان کے چیئر مین کوکب اقبال نے کہا ہے کہ قربانی کو تین دن گزر گئے سڑکوں اور گلیوں سے آلائشیں ابھی تک نہ اٹھائی جا سکیں انہوں نے کہا کہ شہر میں جگہ جگہ آلائشوں کی وجہ سے سخت تعفن پھیل رہا ہے سانس لینا تک مشکل ہوگیا ہے آلائشیں نہ اٹھائی گئیں تو شہر میں وبائی بیماریاں پھیلنے کا خدشہ ہے اور اگر وبائی امراض پھیل گئے تو اس سے انسانی زندگیوں کو شدید خطرہ لاحق ہوگا کوکب اقبال نے کہا کہ تمام متعلقہ ادارے اپنی ذمہ داریوں کو پورا کر نے میں نا کام رہے ہیں انہوں نے عوام کی خدمت کرنے کے بجائے ایک دوسرے پر الزام تراشیاں کرنے کے علاوہ کوئی کام نہیں کیا انہوں نے کہا کہ گندگی،غلاضت اور سیوریج کے پانی سے شہری پہلے ہی مختلف بیماریوں میں مبتلا ہیں جس کی وجہ سے پورے شہر میں صحت عامہ کا مسئلہ پیدا ہو گیا ہے دوسری جانب بارش کے پانی کی نکاسی نہ ہونے کی وجہ سے شہر ی شدید مشکلات کا شکار ہیں کوکب اقبال نے کہا کہ کراچی کو فوری طور پر آفت زدہ قرار دیا جائے اور ہنگامی بنیادوں پر کراچی کے مسائل حل کرنے کے لئے جوائنٹ ایکشن کمیٹی بنائی جائے جس میں K الیکٹرک،کے ایم سی،کے ڈی اے،واٹر بورڈ،ڈی ایم سی اورایس بی سی اے کے علاوہ صوبائی و وفاقی حکومتیں شامل ہوں جو ترجیحی بنیادوں پر کراچی کے تمام مسائل حل کریں تاکہ کراچی شہر کی تمام رونقیں بحال ہو سکیں انہوں نے کہا کہ اگر یہ تمام ادارے کراچی کے مسائل حل کرنے میں ناکام ہو چکے ہیں اس لئے کراچی کو چھ ماہ کے لئے فوج کے حوالے کردیا جائے چونکہ تمام سیاسی جماعتیں اور ان کے زیر اثر اداروں کی کارکردگی صفر ہو چکی ہے کوکب اقبال نے کہا کہ ہنگامی بنیادوں پر شہر سے آلائشیں اٹھائی جائیں اور چونے کا چھڑکاؤ اور اسپرے کیا جائے چونکہ نا اہل حکمرانوں کی وجہ سے عوامی خدمت کے ادارے سیاست کی نظر ہو گئے ہیں انہوں نے کہا کہ کراچی کی تین کروڑ عوام ان اداروں کی کارکردگی سے مایوس ہو چکی ہے چونکہ کوئی بھی ادارہ اپنے فرائض خوش اسلوبی سے ادا نہیں کر رہا ہے کوکب اقبال نے کہا کہ کراچی کی عوام کے ساتھ ظلم بند کیا جائے چونکہ پہلی مرتبہ عید الاضحی پر بارش اور سیوریج کا پانی مساجد اور گلیوں میں بھر جانے کی وجہ سے اکثر شہری نہ تو عید الاضحی کی نماز پڑھ سکے اور نہ ہی پہلے دن قربانی کر سکے جو کہ ایک لمحہ فکریہ ہے 

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -