’’پاکستان کو اقوام متحدہ پرواضح کردینا چاہئے کہ اگر اب بھی ۔۔۔‘‘مولانا معاویہ اعظم طارق نے حکومت کا مسئلہ کشمیر کا حل بتا دیا

’’پاکستان کو اقوام متحدہ پرواضح کردینا چاہئے کہ اگر اب بھی ۔۔۔‘‘مولانا ...
’’پاکستان کو اقوام متحدہ پرواضح کردینا چاہئے کہ اگر اب بھی ۔۔۔‘‘مولانا معاویہ اعظم طارق نے حکومت کا مسئلہ کشمیر کا حل بتا دیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان راہِ حق پارٹی کے سینئر رہنما اورپنجاب اسمبلی میں پارلیمانی لیڈرمولانا معاویہ اعظم طارق نے کہا ہے کہ پوری قوم کشمیریوں کے ساتھ کھڑی ہے، پاکستان کی درخواست پر سلامتی کو نسل کا اجلاس خوش آئند ہے تاہم ہمیں اقوام متحدہ پر اب واضح کر دینا چاہئے  کہ ہم نے 72 سال آپ کی طرف دیکھا ہے ،اگر اب بھی بھارت مذاکرات اور ٹیبل ٹاک پر مطالبات  نہیں مانتا تو پاکستان کے پاس آخری حل جہاد ہو گا جس کے لئے پاکستان کا بچہ بچہ تیار ہے۔

تفصیلات کے مطابق رکن پنجاب اسمبلی اورراہِ  حق پارٹی کے مرکزی رہنما مولانا معاویہ اعظم طارق کا کہنا تھا کہ کشمیرمیں جاری بھارتی مظالم کی اس سے بری مثال نہیں ہو سکتی کہ وہاں کے لوگوں کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق ان کے حقوق دیئے جاتے ،بھارت آج بھی ہمیشہ کی طرح کشمیری مسلمانوں پرظلم وجبر کا گھناؤنا کھیل رہا ہے ،گذشتہ روز پاکستان سمیت دنیا بھر میں بھارتی یوم آزادی کو ’’یوم سیاہ‘‘کےطور پر منا کر دنیا کو پیغام دےدیاہےکہ کشمیر مسلمانوں کا ہےاور مودی سرکار کسی صورت کشمیر پر اپنا تسلط قائم نہیں رکھ سکے گی ۔انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس پاکستان کی سفارتی کامیابی اورحوصلہ افزا بات ہے تاہم پاکستان کو دو ٹوک انداز میں سلامتی کونسل کو یہ پیغام دینا چاہئے کہ اب بہت ہوچکی ،کشمیری مسلمان بھارت کےظلم و ستم برداشت کرتے ہوئے اپنے ہزاوں نوجوانوں کی قربانیاں دےچکے ہیں ،اب بھی بھارت مذاکرات کے ذریعے جائز مطالبات تسلیم نہیں کرتا تو پاکستان کے پاس مسئلہ کشمیر کا واحد حل ’’جہاد‘‘ کی صورت میں رہ جاتا ہے جس کے لئے پوری پاکستانی قوم تیار ہے ۔انہوں نے کہا کہ’’یوم سیاہ‘‘ کے بعد دنیا کو یہ حقیقت تسلیم کر لینی چاہئےکہ کشمیر پاکستان کا حصہ اور شہہ رگ ہے اورہم کسی صورت کشمیری مسلمانوں پر مزید ظلم وستم برداشت نہیں کریں گے ،سلامتی کونسل اوردیگرعالمی اداروں کو اب قراردادوں اور مطالبوں سےآگے نکلتے ہوئے مظلوم کشمیریوں کے حق خود ارادیت کے لئے عملی کردار ادا کرنا ہو گا وگرنہ عالمی امن کے لئے خطرات بڑھتے جائیں گے ۔  

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -