طالبان کیساتھ مذاکرات، افغان حکومتی ٹیم میں شامل فوزیہ کوفی قاتلانہ حملے میں زخمی، طالبان نے بھی اعلان کردیا

طالبان کیساتھ مذاکرات، افغان حکومتی ٹیم میں شامل فوزیہ کوفی قاتلانہ حملے ...
طالبان کیساتھ مذاکرات، افغان حکومتی ٹیم میں شامل فوزیہ کوفی قاتلانہ حملے میں زخمی، طالبان نے بھی اعلان کردیا

  

کابل (ویب ڈیسک) افغان طالبان کے ساتھ مذاکرات کے لیے حکومت کی ٹیم کی رکن فوزیہ کوفی کابل میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے زخمی ہو گئی ہیں۔ جبکہ طالبان نے حملے سے لاتعلقی ظاہر کر دی۔

افغان حکام نے بتایا ہے کہ ہفتے کے روز نامعلوم افراد کی جانب سے کی گئی فائرنگ کے نتیجے میں فوزیہ کوفی کو معمولی چوٹیں آئی ہیں۔ انہوں نے سابق قانون ساز فوزیہ کوفی پر حملے کو ’قاتلانہ حملہ‘ قرار دیا ہے۔

افغانستان کے صدر کے ساتھ ساتھ امن عمل میں شامل سینئر سیاستدانوں نے بھی اس واقعے کی بھرپور مذمت کی ہے۔

قومی مصالحتی اعلیٰ کونسل کے سربراہ عبداللہ عبداللہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر لکھا کہ فوزیہ کوفی پر قاتلانہ حملے کی شدید مذمت کرتا ہوں اور حکومت سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ مجرموں کو گرفتار کریں اور حملے کے پیچھے مقاصد کا پتا لگائیں۔

ادھر طالبان کے ترجمان نے اس حملے میں ملوث ہونے سے انکار کیا ہے۔

خواتین کے حقوق کی وکیل فوزیہ کوفی کا فوری طور پر بیان سامنے نہیں آیا لیکن ان کے فیس بک پر شائع کی گئی پوسٹ کے مطابق کوفی کو دائیں بازو پر چوٹیں آئی ہیں لیکن کوئی جان لیوا زخم نہیں آیا۔

فوزیہ کوفی ماضی میں بھی طالبان کے ساتھ بہت سے مذاکرات کے ادوار میں خواتین کی نمائندگی کر چکی ہیں۔ کوفی خواتین اور لڑکیوں کے حقوق کے ایک مضبوط آواز رہی ہیں، انہوں نے 2001 میں طالبان کی بے دخلی کے بعد لڑکیوں کی تعلیم کے لیے کاوشیں شروع کی تھیں۔

مزید :

بین الاقوامی -