ہم موسیقی کو صاف اور زیادہ فنکی بنانا چاہتے تھے،جس میں گٹار اور ڈرم کے حصے اونچے سُروں میں ہوں اور دُھنوں کی ترتیب خوبصورت ہو

 ہم موسیقی کو صاف اور زیادہ فنکی بنانا چاہتے تھے،جس میں گٹار اور ڈرم کے حصے ...
 ہم موسیقی کو صاف اور زیادہ فنکی بنانا چاہتے تھے،جس میں گٹار اور ڈرم کے حصے اونچے سُروں میں ہوں اور دُھنوں کی ترتیب خوبصورت ہو

  

مترجم:علی عباس

قسط: 47

 ہم اپنی پروڈکشن کمپنی تشکیل دینا چاہتے تھے کیونکہ ہم موسیقی کی دنیا میں نئی روایتوں کو متعارف کرانے کےلئے صرف موسیقار یا ڈانسر کے طور پر ہی نہیں بلکہ مصنف، کمپوزر، ارینجر، پروڈیوسر اور حتیٰ کہ ناشر کے طور پر آگے بڑھنا اور مستحکم ہونا چاہتے تھے۔ ہماری دلچسپی بہت ساری چیزوں میں تھی اور ہمیں ایک ایسی کمپنی کی ضرورت تھی جس کے تحت ہم ان سارے منصوبوں کو پایۂ تکمیل تک پہنچا سکیں۔ ہمیں’ ’ سی بی ایس“ نے اپنی البم پروڈیوس کرنے کی اجازت دےدی تھی۔۔۔ گذشتہ 2 البموں کی فروخت بہتر تھی لیکن اُن کا خیال تھا کہ ہمیں "Different Kind of Lady" میں پائی جانے والی خصوصیت کو مزید بہتر بنانا چاہئے۔ انہوں نے ہمارے لئے ایک شرط رکھی تھی، انہوں نے کمپنی کے فنکاروں کی ترقی اور رابطے کےلئے قائم محکمے سے وابستہ بوبی کولمبی کی ذمہ داری لگائی تھی کہ وہ وقتاً فوقتاً ہمارے ساتھ جائے اور دیکھے کہ ہم کیا کر رہے تھے اور جائزہ لے کہ ہمیں کسی مدد کی ضرورت تو نہیں ہے۔ وہ بینڈ ”بلڈ، سوئیٹ اینڈ ٹیئرز“ کے ساتھ کام کرتا رہا تھا۔ ہم آگاہ تھے کہ ہم پانچوں کو ممکنہ حد تک بہترین موسیقی ترتیب دینے کےلئے بیرونی موسیقاروں کی ضرورت تھی اور ہم کی بورڈکے حوالے سے اور چیزوں کو منظم کرنے میں کمزور تھے۔ ہم اعتماد کے ساتھ اپنے اینکائنو سٹوڈیو میں نئی ٹیکنالوجی کو یکجا کر رہے تھے جس کے ہم ماہر نہیں تھے۔ گریگ فلنگینز سٹوڈیو کے معاون کےلئے کم عمر تھا لیکن ہمارے لئے وہ بہتر تھا کیونکہ ہم کوئی ایسا شخص چاہتے تھے جو ماہر آزمودہ کاروں کے برعکس نئی چیزیں کرنے کے معاملے میں کھُلے ذہن کا مالک ہو جن کا ہم نے برسوں تک مقابلہ کیا تھا۔ 

وہ اینکائنو میںپڑوڈکشن سے پہلے کا کام کرنے آیا تھا اور ہم سب نے ایک دوسرے کو حیرت سے دیکھا تھا۔ ہم سب کی مشترکہ غلط فہمی دم توڑ گئی تھی۔ یہ دیکھنے کےلئے ایک بہتر چیز تھی۔جیسے ہی ہم نے اُس کےلئے اپنے نئے گیتوں کا خاکہ بنایا، ہم نے اُسے بتایا کہ ہمیں وہ گیت پسند ہیں جنہیں فلی انٹرنیشنل ہمیشہ خاص اہمیت دیتا ہے لیکن جب مکس تیار ہوگئے، ہم ہمیشہ کسی دوسرے کی موسیقی سے اُلجھتے ہوئے دکھائی دیئے، اوراُن کی تمام جلاجل اور گٹار کی دُھنوں سے دست و گریباں۔ ہم موسیقی کو صاف اور زیادہ فنکی بنانا چاہتے تھے،جس میں گٹار اور ڈرم کے حصے اونچے سُروں میں ہوں اور اس کی دُھنوں کی ترتیب خوبصورت ہو۔ گریگ نے اُس خاکے کو موسیقی کی شکل دی جو ہم نے اُس کےلئے بنایا تھا۔ ہم نے محسوس کیا کہ وہ ہمارے دماغ پڑھ رہا تھا۔

اُس وقت بوبی کولمبی کا جو اہلکار ہمارے ساتھ کام کرنے کےلئے آیا، وہ پاﺅلنہو ڈی کوسٹا تھا جس کے بارے میں ہم پریشان تھے کیونکہ ہمیں ایسا لگا تھا کہ رینڈی کو بتایا گیا تھا کہ وہ چوب کی ضربوں سے بجنے والے سارے ساز خود نہیں بجا سکتا لیکن پاﺅلنہو اپنے ساتھ برازیلی سامبا روایت لیکر آیا تھا جسے وہ قدیم اور اکثر گھر میں بنے ہوئے سازوں پر اپناتا اور بہتر بناتا۔اورہم بہت زیادہ خوش ہوئے جب ڈی کوسٹا کی موسیقی کا رینڈی کے بہت زیادہ روایتی طریقہ کار کے ساتھ ملاپ ہوا۔ )جاری ہے ) 

نوٹ : یہ کتاب ” بُک ہوم“ نے شائع کی ہے ۔ ادارے کا مصنف کی آراءسے متفق ہونا ضروری نہیں ۔(جملہ حقوق محفوظ ہیں )۔

مزید :

ادب وثقافت -