فلپائن میں ماؤ نواز گروپوں کے خلاف جاری آرمی آپریشن ایک ماہ کیلئے معطل

فلپائن میں ماؤ نواز گروپوں کے خلاف جاری آرمی آپریشن ایک ماہ کیلئے معطل

منیلا (اے پی پی) فلپائن کے صدر بینائنو اکینو نے ماؤ نواز گروپوں کے خلاف جاری آرمی آپریشن ایک ماہ کیلئے معطل کر دیا۔ پیر کو فوج کے سربراہ نے کہا کہ کرسمس اور پوپ فرانسس کے دورہ کی وجہ سے یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔ جنرل گریگوریو کیٹاپانگ نے کہاکہ یکطرفہ جنگ بندی 18 دسمبر کی درمیانی رات سے شروع ہوگی اور 19 جنوری کی درمیانی شب عیسائی فرقہ رومن کیتھولک کے روحانی پیشو پوپ فرانسس کی روانگی کے بعد ختم ہوگی۔ کیٹا پانگ نے بیان میں کہا کہ نیو پیپلز آرمی کے خلاف آپریشن کی معطلی امن کے حصول کیلئے حکومت کی سنجیدگی کو آشکار کرتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ تین عشروں کے دوران یہ طویل ترین کرسمس جنگ بندی ہوگی۔ کیمونسٹ باغی حکومت کا تختہ الٹنے کیلئے 45 سال سے برسرپیکار ہیں۔ اس تصادم میں 40 ہزار سے زائد ہلاک ہو چکے ہیں۔ آرمی چیف نے کہاکہ امن قائم کرنے کا آپریشن اور طوفان سے متاثرہ علاقوں میں امدادی سرگرمیاں جاری رہی گی۔ فوج کے ترجمان کرنل ریسٹی ٹیوٹو پاڈیلا نے کہا کہ جنگ بندی کا اطلاق ابوسیاف اسلامک جنگجو گروپ کے ساتھ نہیں ہوگا۔ یہ گروپ جزائر باسیلان اور جولو میں اغواء، بم دھماکے اور سرقلم کرنے کی کارروائیوں میں ملوث ہے۔ 15 دسمبر کو پوپ فرانسس کی فلپائن آمد متوقع ہے۔

مزید : عالمی منظر