انتظامیہ اور پولیس کی بجائے پی ٹی آئی کے کارکنوں کو فری ہینڈ دیا گیا

انتظامیہ اور پولیس کی بجائے پی ٹی آئی کے کارکنوں کو فری ہینڈ دیا گیا

 لاہور(انوسٹی گیشن سیل)لاہور میں 15دسمبر کو تحریک انصاف کے کارکن دن بھر حکومت کرتے رہے۔ انتظامیہ اور پولیس کی بجائے پی ٹی آئی کے کارکنوں کو فری ہینڈ دیا گیا۔شہریوںکے برعکس پولیس مظاہرین کو سہولتیں فراہم کرتی رہی۔شہر میں تین یاچارکی بجائے دوٹائروں کی گاڑی کے سوار فائدے میں رہے۔دھرنوں سے بچ کر نکلنے کے لیے کئی شہریوں نے گاڑیوں پر پی ٹی آئی کے جھنڈے رومال کی طرح باندھ لیے ۔ جبکہ ہجوم کو دیکھ کر گاڑیوں کے ڈرائیور ً گو نواز گو ً کے نعرے بھی لگاتے رہے۔تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف نے گزشتہ روز اعلان اور پلان سی کے مطابق لاہور میں اپنی طاقت کا بھر پور مظاہرہ کیا۔ٹھوکر نیاز بیگ، شیرا کوٹ ، شاہدرہ ،سگیاں پل ، بھٹہ چوک، ڈیفنس ،چونگی امر سدھو ، مزنگ چونگی ،چوک یتیم خانہ، لبرٹی اور مال روڈ سمیت شہر کے درجوں مقامات پر پی ٹی آئی کے کارکنوں نے دھرنے دیئے۔15دسمبر کے روز عملی طورپر شہر پر تحریک انصاف کے کارکن حکومت کرتے نظر آئے ۔ایک طرف تحریک کے کارکن نت نئے انداز میں احتجاج ریکارڈ کرواتے رہے۔میوزک بجتا رہا۔نعرے بازی ہوتی رہی۔کہیں کوئی پیٹ پر پتھر باندھے زمین میں لیٹا نظر آیا تو کوئی دھمال اور بھنگڑا ڈالتا رہا۔کہیں پپٹ شو تو کہیں ناچتے گھوڑے نظر آئے ۔چونگی امرسدھو کے شنگائی پل سے منچلاکسی شادی میں آنے والے باراتی کی طرح کرنسی نوٹ پھینکتا رہا ۔جبکہ دوسری طرف ان دھرنوں کی وجہ سے ایمبو لینسیں بھی رکتی رہیں۔ اور مریض بھی مرتے رہے۔ مال روڈ پر جی پی او چوک کے نزدیک زمین پر لیٹ کر سٹرک بلاک کرنے والاکارکن ،ایک ناراض شہری کے غصے کا شکار ہوکر موٹر سائیکل تلے ٹانگیں تڑوابیٹھا۔دھرنوں و احتجاج کا بائیکاٹ اوردوکانیںو مارکیٹیں بند نہ کرنے کے بینر اور سٹیمر آویزاں کرنے والے تاجر رہنماﺅں کی اکثر مارکیٹں بند نظر آئیں۔مجموعی طورپرشہر میں کہیں بھی حکومتی رٹ نظر نہ آئی ۔پولیس اور ضلعی انتظامیہ شہریوں کی بجائے مظاہرین کو facilitateکرتے رہے۔ پبلک ٹرانسپورٹ بند رہی ۔شہر میں چنگ چی اور آٹو رکشے سے لیکر بڑی گاڑیاں انتہائی کم تعداد میں نظر آئیں ۔ البتہ دو ٹائروں کی گاڑی کے سوار فائدے میں رہے۔کئی گاڑیوں کے ڈرائیور ہجوم اور دھرنوں سے بچ نکلنے کے لیے ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھے ً گو نواز گو ً اور وزیر اعظم عمران خان ً کے نعرے لگاتے رہے۔ جبکہ بعض نے دھرنو ں کے مقام سے گزرنے پی ٹی آئی کے جھنڈوں کو رومال کی طرح عقبی شیشوں سے باندھ لیا۔

مزید : صفحہ اول