ہتھیاروں کی دوڑ میں بھی مغرب کو دھچکا لگ گیا، روس نے بڑی مشکل پیدا کردی

ہتھیاروں کی دوڑ میں بھی مغرب کو دھچکا لگ گیا، روس نے بڑی مشکل پیدا کردی
ہتھیاروں کی دوڑ میں بھی مغرب کو دھچکا لگ گیا، روس نے بڑی مشکل پیدا کردی

  


سٹاک ہوم (نیوز ڈیسک) گزشتہ نصف صدی کے دوران مغرب نے روس کو ایک اہم طاقت کے طور پر تسلیم کرنے سے انکار کئے رکھا ہے اور خصوصاً امریکا کا خیال تھا کہ اب اسے کبھی بھی روس کی طرف سے خطرے کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔ گزشتہ کچھ عرصے کے دوران پے در پے روس کی طرف سے کچھ ایسے قدم اٹھائے گئے ہیں کہ ایک دفعہ پھر مغرب کو احساس ہوا ہے کہ روس ان کے لئے بہت بڑا چیلنج بن چکا ہے۔ پہلے یوکرین اور پھر شام میں روسی مداخلت پر مغرب کو تشویش لاحق تھی کہ روس ایک دفعہ پھر مشرقی یورپ اور مشرق وسطیٰ میں اپنی موجودگی قائم کرچکا ہے، مگر اب اسلحے کے میدان میں بھی روس نے امریکا اور اس کے اتحادیوں کے لئے بڑا چیلنچ کھڑا کر دیا ہے۔

مزید جانئے: پہلی مرتبہ روس نے ایسی جگہ سے داعش کو نشانہ بناڈالا کہ دنیا کو حیران کردیا، نیا خطرہ پیدا ہوگیا

تحقیقاتی ادارے سٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ نے اپنی تازہ ترین رپوٹ میں بتایا ہے کہ اگرچہ 2014ءمیں مغربی ممالک ہی سب سے زیادہ اسلحہ فروخت کرنے والے ممالک رہے لیکن مارکیٹ میں ان کا حصہ قدرے کم ہوا جبکہ دوسری جانب روس کی طرف سے اسلحے کی فروخت میں اضافہ ہوا، اور بین الاقوامی مارکیٹ میں اس کا حصہ مسلسل بڑھ رہا ہے۔ اسلحہ فروخت کرنے والی 100 بڑی مغربی کمپنیوں کی کل سالانہ آمدنی میں مسلسل چار سال سے کمی آرہی ہے۔ سال2013ءاور2014ءکے درمیان مغربی یورپ اور امریکا سے تعلق رکھنے والی کمپنیوں کے اسلحے کی فروخت میں 3.2 فیصد کمی آئی، جبکہ اس کے برعکس روس سے تعلق رکھنے والی 11 کمپنیوں کی مجموعی سالانہ آمدنی میں سال 2013ءاور 2014ءکے دوران تقریباً 48 فیصد کا غیر معمولی اضافہ ہوا۔ ان کمپنیوں نے 2013ءاور 2014ءکے دوران تقریباً 9 ارب ڈالر (تقریباً 9 کھرب پاکستانی روپے) کا اسلحہ فروخت کیا۔

اسلحے کی فروخت کے لحاظ سے دنیا بھر میں سرفہرست کمپنی لاک ہیڈمارٹن کا تعلق امریکا سے ہے، جس نے 2014ءمیں 37.5 ارب ڈالر کا اسلحہ فروخت کیا۔ اس کے بعد بالترتیب امریکی کمپنی بوئنگ، برطانوی کمپنی بی اے ای سسٹمز، امریکی کمپنی رے تھیون، امریکی کمپنی نارتھ راک گرومان، اور امریکہ ہی سے تعلق رکھنے والی کمپنی جنرل ڈائنامکس کا نمبر آتا ہے، جبکہ یورپی کمپنی ائیربس گروپ 7ویں نمبر پر ہے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...