طالبان کی قید میں رہنے والے سارجنٹ برگدال کو جنرل کورٹ مارشل کا سامنا

طالبان کی قید میں رہنے والے سارجنٹ برگدال کو جنرل کورٹ مارشل کا سامنا

واشنگٹن(اے پی پی) امریکی فوجی حکام نے کہا ہے کہ پانچ برس تک طالبان کی قید میں رہنے والے سارجنٹ برگدال کو فوج سے منحرف ہونے سمیت دیگر الزامات کے تحت جنرل کورٹ مارشل کا سامنا کرنا پڑے گا۔برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق فوجی عدالت کے جنرل رابرٹ ایبرامز نے سارجنٹ برگدال کے مقدمے کو کم سزا دینے کا اختیار رکھنے والی عدالت میں چلانے کی تجویز مسترد کرتے ہوئے یہ فیصلہ دیا۔ امریکی فوج نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ سارجنٹ برگدال پر اہم یا مشکل ڈیوٹی کی وجہ سے فوج سے بھگوڑا ہونے اور دشمن کے سامنے غلط رویے کا مظاہرہ کر کے اپنی کمانڈ یا یونٹ کو خطرے میں ڈالنے کے الزامات کے تحت مقدمہ چلے گا۔برگدال کے وکیل یوجین فیڈل نے امید ظاہر کی کہ مقدمہ اس رخ پر نہیں جائے گا۔انھوں نے کہا کہ برگدال پر جو الزامات عائد کیے گئے ہیں وہ ابتدائی سماعت میں پیش کیے گئے ثبوتوں سے مطابقت نہیں رکھتے۔واضح رہے کہ جنرل کورٹ مارشل کی صورت میں مجرم ثابت ہونے پر سارجنٹ برگدال کو عمر قید ہو سکتی ہے۔

مزید : عالمی منظر


loading...