پاکستان پوسٹ کا ملازمین کیخلاف کرپشن کیسز نیب کو دینے کا فیصلہ

پاکستان پوسٹ کا ملازمین کیخلاف کرپشن کیسز نیب کو دینے کا فیصلہ

لاہور(سپیشل رپورٹر) پاکستان پوسٹ آفس کا صوبائی دارلحکومت سمیت پنجاب بھر کے ضلعی افسران کے خلاف بینظیر انکم سپورٹ پروگرام ‘وہیل ٹیکس ‘اسلحہ لائسنس ٹکٹوں اور متعدد سرکاری محکموں کے ریٹائیرڈ ملازمین کی پینشنز اور پوسٹل سیوننگ بینک میں کروڑوں روپے خورد برد کرنے والے ملازمین کے خلاف کیسز قومی احتساب بیورو کو دینے کا فیصلہ کیا ہے سر فہرست سینئر پوسٹ ماسٹر خاور شاہ کے خلاف اختیارات کا ناجائز استعمال کرکے کروڑوں روپے خورد برد کرنے کا الزام ہے۔تفصیلات کے مطابق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ پاکستان پوسٹ آفس میں صوبائی دارلحکومت میں پنجاب بھر کے ضلعی افسران کے خلاف کاروائی کے لئے نیب کو کیس بھجوانے کا فیصلہ کیا ہے جن میں الزام ہے کہ سابقہ حکومت کے دور اقتدار میں ملازمین نے اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام میں سیاسی شخصیات کے ساتھ ملکر محکمہ کے اربوں روپے کے فنڈز میں سے کروڑں روپے خورد برد کئیے ہیں یہاں تک کے وزیراعلی پنجاب کی طرف سے اربوں روپے کے فنڈ ز فوڈ سٹیمپ سکیم غریب بے روز گار عوام کو پہنچانے کے لئے پاکستان پوسٹ آفس کا انتخاب کیا گیا مگر مستحق افراد کو نظر انداز کرکے محکمہ کی کالی بھیڑوں نے اہم شخصیات کے ساتھ ملکر آپس میں بانٹ لئے تھے ۔ذرائع کے مطابق وہیکل ٹیکس اسلحہ لائسنس ٹکٹوں کے علاوہ متعدد سرکاری محکموں کے ملازمین کی پینشنوں میں بھی خورد برد کی گئی ۔ذرائع کے مطابق پوسٹل سیونگ بینک میں بھی کروڑوں روپے کا غبن کیا گیا جس کے الزام میں سنئیر پوسٹ ماسٹر خاور شاہ کو نوکری سے برخاست کیا گیا ۔بعد ازاں خاور شاہ سمیت کئی افسران کے خلاف کاروائی کے لئے کیسز نیب کو بھجوادئیے گئے ہیں جن میں کروڑوں روپے خورد برد کرنے کے ریکارڈ پر خاور شاہ کا نام سر فہرست ہے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...