غلنئی بازار بائی پاس کیخلاف مقامی باشندوں کا احتجاج

غلنئی بازار بائی پاس کیخلاف مقامی باشندوں کا احتجاج

مہمند ایجنسی (نمائندہ پاکستان)غلنئی بازار بائی پاس کے خلاف مقامی باشندوں کا احتجاج۔ پہلے ہی اپنی زمینیں حکومت کو سرکاری کالونی کیلئے دی ہے۔ بائی پاس روڈ کے نقشے میں ان کے گھر آگئے ہیں۔ ٹینڈر منسوخ کیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار مہمند ایجنسی غلنئی گاؤں کے رہائشیوں عثمان خان، سیال خان، حمزا خان، ضمیر خان، خان بہادر اور دیگر نے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ حکومت ہیڈ کوارٹر غلنئی بازار کے پیچھے باجوڑ پشاور شاہراہ پر بائی پاس روڈ کی منظوری دی ہے۔ جو آبادی کے درمیان سے گزرے گی۔ انہوں نے کہا کہ گاؤں کی آبادی زیادہ اور زمینیں کم ہیں۔ پہلے بھی غلنئی کے باشندوں نے پولیٹیکل انتظامیہ کو سرکاری کالونی، محکمہ جات اور سرکاری ضرورت کیلئے رضا مندی سے سستے داموں 1200 جرب زمین دی ہے۔ جس کا بھی کوئی صلہ نہیں ملا۔ اب غلنئی گاؤں سے بائی پاس گزرنے پر اہلیان علاقہ ناراض ہیں اس لئے حکومت ٹینڈر منسوخ کرائے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں ہم نے پولیٹیکل انتظامیہ کو بھی اپنی تحفظات سے آگاہ کر دیا ہے۔ اگر ہمارے مطالبات نہ مانے گئے تو ہم ہر قسم کے احتجاج سے گریز نہیں کرینگے۔ اور انصاف کیلئے عدالت کا دروازہ بھی کھٹکٹائیں گے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...