عمران خان کی تقریر کے موقع پر شہداءکے ورثاءکا احتجاج ، عمران خان نے لواحقین کو سٹیج پر بلالیا، مطالبات سنے

عمران خان کی تقریر کے موقع پر شہداءکے ورثاءکا احتجاج ، عمران خان نے لواحقین ...
عمران خان کی تقریر کے موقع پر شہداءکے ورثاءکا احتجاج ، عمران خان نے لواحقین کو سٹیج پر بلالیا، مطالبات سنے

  


پشاور(مانیٹرنگ ڈیسک) آرمی پبلک سکول میں آکائیولائبریری کے افتتاح کے موقع پر عمران خان کے خطاب کے دوران شہید بچوں کے والدین نے احتجاج اور نعرہ بازی شروع کردی جس پر پرویز خٹک کو بھی سٹیج پر آنا پڑگیا تاہم عمران خان نے متاثرہ والدین کو سٹیج پر بلالیااور سٹیج ان کے لیے چھوڑتے ہوئے ہدایت کی کہ ہماری کوتاہی ہے تو بتائیں ، باری باری اپنے مطالبات پیش کریں ،ہم سے جوکچھ بھی ہوا ، کریں گے ,بچوں کے معاملے پر کسی قسم کی کوتاہی نہیں برتی جائے گی۔

اس کے بعد ایک بچے کے والدنے خطاب کرتے ہوئےعمران خان کے اقدام کو سراہتے ہوئے کہاکہ اُنہیں پلاٹ ، پیسہ یاگھر نہیں چاہیے ، انصاف چاہیے ، ایک سال میں صوبائی حکومت نے کونسی ذمہ د اری پوری کی ؟ آئی جی نے نااہلی کا اعتراف کیا لیکن اب تک معطل کیوں نہیں کیاگیا، ہم سے کیے گئے وعدے آج تک پورے نہیں کیے گئے ، اے پی ایس سانحے کے ذمہ داران کا تعین کرنے کے لیے جوڈیشل کمیشن قائم کیے جائیں ۔ہمیں وہ مسکراتے ہوئے چہرے بھی یاد ہیں جنہوں نے مسکراتے ہوئے پشاور آنے کا اعلان کیا ، لائبریری نام کرنے سے کچھ نہیں ہوتا، سیاستدان آتے جاتے ہیں لیکن لواحقین کے پاس کیوں نہیں آتے ۔

اس کے بعد خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے بتایاکہ اُن کی والدہ کینسر کے مرض میں مبتلا تھیں اور اسی مرض میں ہی اللہ کو پیاری ہوگئیں ، ایمان بڑا کمزور ہواکہ وہ والدہ جواپنے بچوں کو پیار دیتی تھی ، وہ بھی کھوگئی لیکن اسی دوران پتہ چلا کہ پاکستان میں کوئی کینسر کا ہسپتال نہیں اور آج شوکت خانم کو ہرکوئی جانتاہے ، اس وقت علم ہواکہ اللہ تعالیٰ نے کوئی بڑا کام لینا تھا۔اُنہوں نے کہاکہ جب جمائماخان سے علیحدگی کے بعد بچے بچھڑے تو بہت دکھ ہوا، میں خود باپ ہوں ، شہداکے لواحقین کا غم سمجھتاہوں ، جہاں تک آپ لوگوں کا دھرنے پر اعتراض ہے تو وہ میری ذات کیلئے نہیں تھا، میرے پاس اپنی ذات کیلئے کسی چیز کی کمی نہیں اور نہ ہی کسی سے ذاتی لڑائی تھی ، سب کچھ ملک کیلئے کررہاتھا ۔

اُنہوں نے بتایاکہ دھرنے کے دوران شہید بچوں کی تصاویر دیکھیں تو فیصلہ کیاکہ سب کچھ چھوڑ دیں اور اُن ظالموں کے پیچھے جاناہے ، یہ کوئی سیاسی بات نہیں ، عمران خان بھی انسان ہے ، بچے تو واپس نہیں لاسکتے ، سب سے بڑی دعا یہی دے سکتے ہیں کہ اللہ آپ کو صبر دے ، اب سب مل کر یہ کہہ سکتے ہیں کہ ان بچوں کی وجہ سے دہشتگردی کافی کم ہوگئی ۔ ملک دہشتگردی کے خلاف اکٹھا ہوگیابچے بہترزندگی گزاریں گے اور مائیں بچوں کو سکول بھیجنے سے نہیں گھبرائیں گی ۔ عمران خان نے طلباء کو خوشخبری سنائی کہ ہری پور میں خیبرپختونخوا کی سب سے بڑی اور سٹیٹ آف دی آرٹ ٹیکنیکل یونیورسٹی ہری پور میں بنانے جارہے ہیں جو شہداء کے نام پر بنائی جائے گی اور جلدہی معاہدے پر دستخط ہونے والے ہیں ۔ 

مزید : پشاور /اہم خبریں


loading...