دنیا کے مختلف ممالک میں موجود شامی مہاجرین کی تعداد43 لاکھ سے تجاوز کر گئی :اقوام متحدہ

دنیا کے مختلف ممالک میں موجود شامی مہاجرین کی تعداد43 لاکھ سے تجاوز کر گئی ...
دنیا کے مختلف ممالک میں موجود شامی مہاجرین کی تعداد43 لاکھ سے تجاوز کر گئی :اقوام متحدہ

  


جنیوا(این این آئی) دنیا کے مختلف ممالک میں موجود شامی مہاجرین کی تعداد 43 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے۔اقوام متحدہ کے کمیشن برائے مہاجرین (یو این ایچ سی آر) کی رپورٹ کے مطابق رواں ماہ کے آغاز تک شام سے ہجرت کرنے والے افراد کی تعداد 43 لاکھ 89 ہزار 735 ہو چکی ہے۔خیال رہے کہ یہ مہاجرین کی رجسٹرڈ تعداد ہے اور اس میں ا±ن افراد کو شمار نہیں کیا گیا جنھوں نے دیگر ذرائع سے شام یا عراق سے دوسرے خطوں میں ہجرت کی۔شام سے لوگوں کی ہجرت میں تیزی 2012 کے بعد سے آئی، جب وہاں داعش کی شدت پسندی میں اضافہ ہوا۔اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق اس وقت سب سے زیادہ مہاجرین کی تعداد ترکی میں موجود ہے۔یو این ایچ سی آر نے بتایا ہے کہ ترکی میں رجسٹرڈ مہاجرین کی تعداد 22 لاکھ 92 ہزار ہے۔اقوام متحدہ نے ترکی جانب سے مہاجرین کی فلاح و بہبود پر خرچ کیے گئے 8 ارب ڈالرز کا بھی تذکرہ کیا ہے۔ترکی کے بعد مہاجرین کی بڑی تعداد یعنی 10 لاکھ 70 ہزار افراد لبنان میں موجود ہیں۔یون ایچ سی آر کے مطابق اردن میں 6 لاکھ 33 ہزار اور مصر میں ایک لاکھ 23 ہزار مہاجرین کی آمد ہوئی۔خیال رہے کہ مہاجرین کی بڑی تعداد ترکی کے راستے یورپ جانے کی خواہش مند ہے کیونکہ ان کو یورپ میں محفوظ مستقبل کے زیادہ مواقع نظر آتے ہیں۔یورپ میں سب سے زیادہ شامی مہاجرین جرمنی میں موجود ہیں، حکام کو توقع ہے کہ 8 لاکھ مہاجرین جرمنی آئیں گے۔خیال رہے کہ سعودی عرب نے 25 لاکھ مہاجرین کی ملک میں موجودگی کا دعویٰ کیا تھا مگر یو این ایچ سی آر کی رپورٹ میں ایسا کوئی تذکرہ موجود نہیں ہے۔یاد رہے کہ شام اور عراق کے بڑے حصے پر داعش نامی شدت پسند تنظیم نے جون 2014 میں قبضہ کرکے خود ساختہ اسلامی ریاست بنانے کا اعلان کیا تھا، جس کے بعد وہاں بڑے پیمانے پر قتل و غارت کا آغاز ہوا اور اسی وجہ سے دونوں ممالک کے شورش زدہ علاقوں سے مقامی آبادی نے نقل مکانی کا آغاز کیا۔خیال رہے کہ داعش کے خلاف فضائی کارروائی کی قیادت امریکا کر رہا ہے مگر امریکا کی جانب سے جنگ زدہ علاقوں کے لوگوں کو اپنے ملک میں بطور مہاجرین قیام کے انتطام کے بڑے اقدامات نظر نہیں آرہے۔یو این ایچ سی آر کی رپورٹ کے مطابق شام سے ہجرت کرنے والے افراد میں 50.3 فیصد خواتین اور 49.7 فیصد مرد ہیں جبکہ ان میں 51.2 فیصد افراد کی عمر 18 سال سے کم ہے۔واضح رہے کہ رواں برس یورپ میں داخل ہونے والے مہاجرین کی تعداد 6 لاکھ 81 ہزار 713 ہے، جن میں سب سے زیادہ 2 لاکھ 5 ہزار 578 شامی مہاجرین سربیا میں موجود ہیں جبکہ جرمنی میں ایک لاکھ 45 ہزار، سوئیڈن میں 94 ہزار اور ہنگری میں 72 ہزار شامی مہاجرین موجود ہیں۔

مزید : بین الاقوامی


loading...