ایف پی سی سی آئی اور لاہور گیریژن یونیورسٹی کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر دستخط

ایف پی سی سی آئی اور لاہور گیریژن یونیورسٹی کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر ...

لاہور(کامرس رپورٹر) فیڈریشن آف پاکستان چیمبر زآف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایف پی سی سی آئی) اور لاہور گیریژن یونیورسٹی نے ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط کیے ہیں جس کا مقصد تحقیقی سرگرمیوں کو فروغ اور صنعت و تعلیمی شعبے کے درمیان تعلقات مستحکم کرنا ہے۔ ایف پی سی سی آئی کی جانب سے ریجنل چےئرمین و نائب صدر منظورالحق ملک اور اور لاہور گیریژن یونیورسٹی کے وائس چانسلر میجر جنرل (ر) عبید بن ذکریا نے مفاہمتی یادداشت پر دستخط کیے۔اس موقع پر ریجنل چےئرمین و نائب صدر ایف پی سی سی آئی منظورالحق ملک نے کہا کہ پاکستان قدرتی وسائل سے مالا مال ہے ضرورت اس امر کی ہے کہ ان کو بروئے کار لاتے ہوئے ملک کو معاشی طور پر مستحکم کیا جائے۔ ایف پی سی سی آئی گیر یژن یونیورسٹی کے طلباء کی ہر ممکن مدد کرے گا اور انہیں انڈسٹری میں انٹرنشپ اور ٹریننگ کے بھرپور مواقع فراہم کرے گا۔ انہوں نے کہا ملک کی صنعتیں ہی قوم کو روزگار مہیا کرتی ہیں اور بد قسمتی سے ہم نے اس طرف بالکل بھی توجہ نہیں دی۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں صنعت و تجارت اور کاروبار کو فروغ دینے کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نے ایل جی یو کے علم اور ریسرچ میں جدت کے اقدام کو سراہا اور کہا کہ اس سے ملک و قوم کو یقینی فائدہ حاصل ہوگا۔سرکاری و غیرسرکاری تعلیمی اداروں اور ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ مل کر کام کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایف پی سی سی آئی نے بہت سی پبلک اور پرائیویٹ یونیوسٹیوں کے ساتھ مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کیے ہیں۔ انہوں کہا کہ ایف پی سی سی آئی اور لاہور گیریژن یونیورسٹی تحقیقی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لیے مل کر کام کریں۔لاہورگیریژن یونیورسٹی کے وائس چانسلر میجر جنرل (ر) عبید بن زکریا نے کہا کے اس معاہدے سے طلباء کو علم اور ریسرچ میں جدت ملے گی جو ہمارے ملک کی صنعتی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔

لاہور گیریژن یونیورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر گلزار نے کہاکہ تعلیمی اداروں ا ور صنعتوں کو ملکی معاشی ترقی کے لئے مل کر کام کرنا ہوگا۔تعلیمی اداروں اور صنعتوں کا باہمی تعاون وقت کی اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے ایل جی یو اور ایف پی سی سی آئی کے درمیان ہونے والے معاہدے کی تعریف بھی کی۔

مزید : کامرس