ترکی کی ساحلی چٹانوں میں کشتی الٹنے سے51 مہاجرین پھنس گئے

ترکی کی ساحلی چٹانوں میں کشتی الٹنے سے51 مہاجرین پھنس گئے

انقرہ(این این آئی)ترک کوسٹ گارڈز ان درجنوں تارکین وطن کو ریسکیو کرنے میں مصروف ہیں، جو بحیرہء ایجیئن کے راستے یونان جانا چاہتے تھے، تاہم ان کی کشتی ڈوب گئی۔ترکی کے سرکاری میڈیا کے مطابق مغربی ترک ساحلی علاقے میں کشتی کو حادثہ پیش آ جانے کے بعد درجنوں تارکین وطن اس چٹانی علاقے میں پھنسے ہوئے ہیں، جنہیں بچانے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔بتایا گیا ہے کہ ربر کی کشتی پر 51 تارکین وطن سوار تھے، مگر بحیرہء ایجیئن میں ترک علاقے ڈیکِیلی کے قریب یہ کشتی ڈوب گئی۔ٹی وی پر نشر کیے جانے والے مناظر میں دکھایا گیا کہ درجنوں تارکین وطن چٹانی سمندری علاقے میں مدد کے طالب ہیں، جب کہ ان کو ریسکیو کرنے کی کارروائیوں میں ہیلی کاپٹر بھی استعمال کیے جا رہے ہیں۔ترک میڈیا کا کہناتھا کہ اس آپریشن میں سب سے پہلے چار بچوں کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے سمندر سے نکالا گیا اور انہیں دوبارہ ڈیکیِلی کی بندرگاہ پر لایا گیا۔فی الحال ان تارکین وطن کی شہریتوں کے بارے میں اطلاعات سامنے نہیں آئی ہیں۔ ٹی وی پر نظر آنے والے مناظر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ تباہ ہونے والی ربر کی کشتی کے ساتھ چٹانوں میں بہت سے تارکین وطن موجود ہیں، تاہم اس حادثے میں کسی شخص کے ہلاک یا زخمی ہونے کی اطلاعات سامنے نہیں آئی ہیں۔

مزید : عالمی منظر


loading...