شامی رجیم کا الریاض اعلامیے کی تنسیخ تک حزب اختلاف سے مذاکرات سے انکار

شامی رجیم کا الریاض اعلامیے کی تنسیخ تک حزب اختلاف سے مذاکرات سے انکار

دمشق(این این آئی)شامی حکومت کے جنیوا امن مذاکرات میں شریک وفد کے سربراہ بشارالجعفری نے کہا ہے کہ الریاض اعلامیے کی تنسیخ تک حزب اختلاف کے ساتھ کوئی بات چیت نہیں ہوگی ۔میڈیارپورٹس کے مطابق بشارالجعفری نے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی برائے شام اسٹافن ڈی میستورا کے ساتھ ملاقات کے بعد نیوز کانفرنس میں کہا کہ اگر حزب اختلاف اپنے اس موقف پر مْصر رہتی ہے کہ صدر بشارالاسد کو کسی بھی عبوری حکومت میں شامل نہیں ہونا چاہیے تو پھر اس کے ساتھ کوئی بات چیت نہیں ہوسکتی۔انھوں نے مزید کہاکہ ہم نے ڈی میستورا کو بتادیا ہے کہ ہم ان کے حالیہ بیانات کو مسترد کرتے ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کے ایلچی کی ’’ غلطیوں‘‘ سے ان کے مفوضہ کام کو نقصان پہنچا ہے۔ان سے جب پوچھا گیا کہ مذاکرات کی راہ میں کون رکاوٹیں ڈال رہا ہے تو وہ یوں گویا ہوئے برادرانِ یوسف نے حضرت یوسف علیہ السلام کو کنویں میں پھینکا تھا۔ہم سب قرآن مجید میں بیان کردہ اس قصے سے آگاہ ہیں۔انھوں نے واضح کیا کہ یہ حزبِ اختلاف ہے جو مذاکرات میں رکاوٹیں ڈال رہی ہے۔ گویا انھوں نے شامی حزب اختلاف کو برادرانِ یوسف قرار دیا ہے۔بشار الجعفری نے الریاض اعلامیہ تیار کرنے والوں کو بھی جنیوا ہشتم مذاکرات کی ناکامی کا ذمے دار قرار دیا ہے۔

مزید : عالمی منظر