جنگ سے متاثر یمن کو مہلک ترین خناق کی وبا کا سامنا

جنگ سے متاثر یمن کو مہلک ترین خناق کی وبا کا سامنا

نیویارک(این این آئی)جنگ، بھوک اور بیماریوں سے تباہ حال یمن میں خْناق کی وبا پْھوٹنا شروع ہو گئی ۔میڈیارپورٹس کے مطابق امدادی تنظیموں نے بتایاکہ یہ وبا انتہائی مہلک ثابت ہو سکتی ہے۔اقوام متحدہ کے ادارہ برائے صحت کے مطابق خْناق سے سب سے زیادہ متاثر ہونے کا خطرہ بچوں کو ہے۔ اب تک سامنے آنے والے 280 مشتبہ خْناق کے کیسز میں سب سے زیادہ دیکھی گئی۔ اس بیماری میں اب تک 33 اموات بھی رپورٹ کی گئی ہیں۔ اس بیماری سے بچاؤ کے لیے انتہائی کم افراد کو مدافعتی ادویات تک رسائی حاصل ہے۔ڈبلیو ایچ او کے مطابق ہلاک اور متاثر ہونے والے بچوں میں اْن کی تعداد زیادہ ہے جن کو اس متعدی اور جان لیوا بیماری کے پھیلتے وقت مدافعتی ویکسین فراہم نہیں کی جا سکی تھی۔ڈبلیو ایچ او کے ترجمان نے بتایاکہ اگر روک تھام نہ کی گئی تو خْناق کی مہلک وبا، شدید المناک صورتحال پیدا کر دے گی جس کا سب سے زیادہ شکار بچے ہوں گے،ڈبلیو ایچ او کے علاوہ بین الاقوامی طبی امدادی تنظیم ڈاکٹرز ودآؤٹ بارڈرز کے معالجین اور منتظمین کا بھی کہنا تھا کہ خناق کی وبا کا بڑے پیمانے پر پھوٹنا اب ناگزیر ہو چکا ہے ۔ تنظیم کے مطابق طبی سہولیات کا فقدان، علاج معالجے کی عدم رسائی، متعدی امراض سے بچاو کی ویکسین کا دستیاب نہ ہونا، انتہائی بڑی تعداد میں لوگوں کا ایک جگہ سے دوسری جگہ بار بار ہجرت کرنا اور اس انفیکشن کے شکار لوگوں کا دوسرے افراد سے میل جول نے اس مہلک بیماری کے پھیلاؤ میں اہم کردار ادا کیا ہے۔طبی ماہرین کے مطابق خْناق کسی بھی متاثرہ شخص سے نزلے، چھینک، کھانسی یہاں تک کہ بات چیت کرنے سے بھی پھیل سکتا ہے۔ڈبلیو ایچ او کے مطابق یمن اس وقت ہیضے کی وبا سے بھی دوچار ہے، اس بیماری سے ایک ملین سے زائد افراد متاثر ہیں۔ ہیضے کی وبا سے اب تک دو ہزار سے زائد اموات ہو چکی ہیں۔ڈاکٹرز ودآؤٹ بارڈرز کے مطابق خْناق، ہیضے کی وبا سے زیادہ مہلک ثابت ہو سکتی ہے کیونکہ اس بیماری میں مبتلا ہر پانچ میں سے دو افراد کی موت ہو سکتی ہے۔یاد رہے کہ مشرقی وسطیٰ کے اس غریب عرب ملک یمن میں اب تک دس ہزار سے زائد افراد خانہ جنگی کے باعث لقمہ اجل بن چکے ہیں جبکہ دو ملین سے زائد افراد ہجرت کرنے پر مجبور ہوئے۔

مزید : عالمی منظر


loading...