روز نامہ ڈان کے دفاتر کا گھیراؤ، حکومت اپنی ذمہ داریاں پور ی کرے

  روز نامہ ڈان کے دفاتر کا گھیراؤ، حکومت اپنی ذمہ داریاں پور ی کرے

  



لاہور (خصوصی رپورٹ)اے پی این ایس کی پنجاب کمیٹی نے روزنامہ ڈان کے دفاتر کے گھیراؤ کی شدید مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ حکومت کو اس گھیراؤ پر اپنی قانونی آئینی ذمہ داریاں پوری کرنی چاہئے بعض عناصر میڈیا کا گلا گھونٹنا چاہتے ہیں اور وہ اظہار رائے چاہتے ہیں جو صرف ان کی مرضی کا ہو اے پی این ایس کی پنجاب کمیٹی نے حکومت اور اداروں سے مطالبہ کیا وہ صحافیوں،مدیران،مالکان اور اخبارات کی بلڈنگوں کی مکمل تحفظ کے انتظامات کرے پنجاب کمیٹی کے اجلاس جو لاہور کے ایک مقامی ہوٹل میں منعقد ہوا صدارت پنجاب کمیٹی کے صدر خوشنود علی خان نے کی۔اس موقع پر نوید چوہدری،عمر  مجیب شامی،بلال محمود،ملک لیاقت،عمران  اطہر،اویس خوشنود،محسن ممتاز،سید منیر جیلانی، صفدر علی خان،منور احمد،محمد عمر بٹ،صداقت عباسی،مختا ر چوہدری،احمد اویس عارف،سعدیہ شریف، امجد اقبال،سید عمران احمد،رانا فہد صفدر،محمد اویس ریاض محمد اویس رازی نے شرکت کی کمیٹی نے اے پی این ایس کے سیکرٹری جنرل سید سرمد علی کی والدہ کی وفات پر تعزیت کا اظہار اور اے پی این ایس کی مرکزی قیادت سے مطالبہ کیا کہ حکومت اور صوبائی حکومتوں نے اشتہارات کا کوانٹم بہت کم کردیا بعض اخبارات بند ہوچکے اور بعض اس کے بہت قریب ہیں۔اس لئے حکومتوں پر پریشر بڑھایا جائے اور ایگزیکٹو کمیٹی نے اس سلسلے میں جولائحہ عمل تجویز کیا تھا اس پر فوری عمل کیا جائے اخبارات کے فرنٹ پیج احتجاجاً سیاہ چھاپے جائیں یا بالکل سفید ان پر کوئی خبر نہ ہو۔پنجاب میں اشتہارات اس لئے بند ہیں اور اشتہارات کلر کم شائع ہورہے ہیں کہ خوف سے بیوروکریسی اشتہارات جاری کرنے کو تیار نہیں اور انفارمیشن کے افسران بھی نیب کے بعض ایکشنز کی وجہ سے خوف میں مبتلا ہیں لہٰذا پنجاب کمیٹی کے صدر نے نوید چوہدری کی سربراہی میں ایک سب کمیٹی تشکیل دی جس میں سید سجاد بخاری،سید منیر جیلانی،محمد اویس خوشنود،صفدر علی خان،عرفان اطہر قاضی،محسن ممتاز،بلال محمود،عمر مجیب شامی،عمر بٹ،منور احمد،ملک لیاقت شامل ہیں کمیٹی پہلے DGPRاور ان کے افسروں سے ملے گی اس کی نیب کی وجہ سے مشکلات معلوم کرے گی اور پھر ڈی جی نیب لاہور سے ملاقات کرے گی تاکہ نیب کی وجہ سے سرکاری افسران پر پریشر کو کم کیا جاسکے تاکہ وہ اخبارات کے اشتہارات کم نہ کریں اور جس روانی سے پہلے یہ کام ہورہا تھا اسی روانی سے یہ کام جاری رہے کمیٹی نے کہا کہ اے پی این ایس کے کلیرنس سسٹم کو بہتر بنانے کیلئے کام کرنا ہوگا عمر مجیب  شامی اور کمیٹی  کین صدر خوشنود علی خان نے کہا کہ خوش آئند بات یہ ہے کہ پنجاب کے وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان کا رویہ اب مثبت ہے لہٰذا ہمیں بہتری کی امید رکھنی چاہئے لیکن حکومت کے تمام پراجیکٹس میں اشتہارات کا حصہ ضرور ہونا چاہئے حکومت ریجنل اور درمیانے اخبارات پر خاص توجہ دے اور ریجنل میڈیا کے اشتہارات کے کوٹے کی منصفانہ تقسیم ہوبلال محمود نے کہا کہ حکومت پر دباؤ بڑھانا چاہئے نوید چوہدری نے کہا کہ جو اخبارات حکومت کی من پسند خبریں شائع نہیں کرتے ان کے ساتھ زیادتی کی جارہی ہے پچھلے دنوں ڈان اخبار کے ساتھ جو ہوا ہمیں ڈان کا ساتھ دینا چاہئے اشتہارات دینے والے ادارے اپنی مجبوری بتاتے ہیں کچھ پتہ نہیں کس اخبار کی خبر پراشتہارات بند کردیئے جاتے ہیں اخباری مالکان چاہتے ہیں کہ ورکرز کی تنخواہیں وقت پر ادا کی جائیں مگر وہ مجبور ہیں معاشی بحران بڑھ رہا ہے اخبارات مررہے ہیں قرارداد پاس کی جائے کہ اداروں میں اظہاررائے پر قدغن کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جائے گا عرفان اطہر نے کہا کہ نیب آئے روز اخبارات کے اشتہارات کی تفصیلات منگوارہی ہے اس کا سدبات ہونا چاہئے عمر بٹ نے کہا کہ ہمارے مسائل حل نہیں ہورہے ہیں اے پی این ایس اس حوالے سے لائحہ عمل ترتیب دے ملک لیاقت نے کہا کہ اشتہارات کے معاملے پر ہم زیرو پوائنٹ پر کھڑے ہیں ہمارا کسی پر دباؤ نہیں ہے ہمیں اس حوالے سے اقدامات کرنے ہوں گے محسن ممتاز نے کہا کہ وزیراعظم کی ہدایت کے باوجود پنجاب حکومت اشتہارات جاری نہیں کررہی عرفان شاہ نے کہا کہ میڈیا مسائل میں گھراا ہوا ہے میڈیا کو دیوار کے ساتھ لگایا جارہا ہے حکومت کو اخبارات کے مسائل کو حل کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں حکومت کے جوایڈوائزر ہیں ان سے ملاقات کی جائے راؤ امجد اقبال نے کہا کہ ہمیں اشتہارات کی ادائیگی نہیں ہوتی ایڈورٹائزنگ ایجنسیوں سے ادائیگی بہتر بنائی جائے۔

اے پی این ایس

مزید : صفحہ آخر