”اسلامک لسکولنگ سسٹم، مقاصد، طریقہ کار اور نتائج“ پر کانفرنس کا انعقاد

”اسلامک لسکولنگ سسٹم، مقاصد، طریقہ کار اور نتائج“ پر کانفرنس کا انعقاد

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر) جماعت اسلامی سندھ کے امیر سابق رکن قومی اسمبلی محمد حسین محنتی نے کہا ہے کہ  اسلامک اسکولنگ سسٹم وقت کی ضرورت اور اس کا بڑہتا ہوا رجحان ایک مثبت علامت ہے۔اس سسٹم کے استحکام کے لیے باقاعدہ نصاب، نظام اور اساتذہ کی تیاری ناگزیر ہے، حکومت سندھ کی جانب سے بیرونی ایجنڈے پر سندھ ٹیکسٹ بک بورڈ سے اسلامی ہیروز وتعلیمات کو ہذف کرنا تشویش ناک اور قابل مذمت ہے،ہمارے نظام تعلیم کی بنیاد قرآن پر رکھی گئی ہے، اس کے بغیر ہمارا نظام حیات کامیاب نہیں ہوسکتا۔اسلامک اسکولنگ سسٹم ایک فطری سوچ وفکر کا نام ہے جو انسان کو آگے بڑھنے کا جذبہ دیتا ہے، اصل تصور دین اللہ کے نظام کو قائم کرنا ہے، قیام پاکستان کا مقصد بھی ملک میں قرآن وسنت کے نظام کا قیام ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے قباء آڈیٹوریم میں جماعت اسلامی سندھ کے شعبہ تعلیم کے تحت منعقدہ کل سندھ تعلیمی کانفرنس سے خطاب کے دوران کیا۔کانفرنس کا عنوان”اسلامک اسکولنگ سسٹم،مقاصد،طریقہ کار اور نتائج“ تھا۔ کانفرنس میں کراچی تاکشمور سندھ بھر سے اسکول مالکان، پرنسپل وذمہ داران نے شرکت جبکہ چیئرمین مرکزی تعلیمی کمیٹی جماعت اسلامی پاکستان سید شاہد ہاشمی، ممتاز تعلیمی ماہرین ڈاکریکٹر رفاہ یونیورسٹی اسلام آباد ارشد بیگ،اتالیق کے شہزاد قمر،آفاق کے ضیاء الحق قادری،  ای ڈی آئی کے محمدعظیم صدیقی،عثمان پبلک اسکول کے ڈائریکٹر معین الدین نیئر،تنظیم اساتذہ سندھ کے سابق صدر محمد حسین سومرو،مصباع الہدیٰ صدیقی،مفتی مصباح اللہ، شعبہ تعلیم کے ڈائریکٹر پروفیسر اسحاق منصوری،اے ڈی سومرو ودیگر نے بھی خطاب کیا۔محمد حسین محنتی نے مزید کہا کہ انسان کی قدر وقیمت علم کی وجہ سے ہے، نصاب کے ساتھ اساتذہ کرام کا نسل نو کی تربیت میں بہت بڑا کردار ہوتا ہے،اسلام ونظریہ پاکستان سے ہم آہنگ نصاب تعلیم ہی نوجوان نسل کی بہترین تربیت اور قیام پاکستان کے حقیقی مقاصد کے قریب کرسکتا ہے۔صوبائی امیر نے زور دیا کہ اسلامک اسکولنگ سسٹم کے تحت چلنے والے اداروں کے اثرات معاشرے اور اردگرد کے ماحول پر پڑنے اور نظر آنے چاہیں۔

کانفرنس انعقاد

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...