” میری ماں نے حمل کے دوران یہ ٹیسٹ کروایا جس کی وجہ سے میں پوری زندگی کیلئے معذور پیدا ہوا“

” میری ماں نے حمل کے دوران یہ ٹیسٹ کروایا جس کی وجہ سے میں پوری زندگی کیلئے ...
” میری ماں نے حمل کے دوران یہ ٹیسٹ کروایا جس کی وجہ سے میں پوری زندگی کیلئے معذور پیدا ہوا“

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ کا 48سالہ گیری مک فیرلین نامی شہری پیدائشی طور پر معذورہے جس کا کہنا ہے کہ اس کی ماں کے دوران حمل ایک ٹیسٹ کی وجہ سے وہ معذور ہوا۔ دی مرر کے مطابق گیری کی پیدائش 1971ءمیں ہوئی تھی۔ اس کی والدہ نے ’ہارمون پریگنینسی ٹیسٹ‘ کروایا تھا جو ان دنوں رائج تھا تاہم 1978ءمیں اسے نقصان دہ قرار دے کر ختم کر دیا گیا تھا اور اس کی دوا مارکیٹ سے اٹھا لی گئی تھی۔

رپورٹ کے مطابق گیری جب پیدا ہوا تو اس کے بازو سیدھے اکڑے ہوئے تھے اور مستقل ویسے ہی رہے۔ اس کے دونوں ہاتھوں کی صرف ایک ایک انگلی اور ایک انگوٹھا حرکت کرتا تھا۔ باقی انگلیاں ناکارہ تھیں۔ اس کے علاوہ اس کے بازوﺅں اور ٹانگوں کے کئی پٹھے مردہ تھے۔ بچپن اور لڑکپن میں اس کے 100سے زائد آپریشن ہوئے، جن کے نتیجے میں اس کی ٹانگوں اور بازوﺅں میں کچھ لچک آئی۔ اس سے وہ چلنے پھرنے کے قابل ہو گیا اور اس کے بازوﺅں کی اکڑن بھی کسی حدتک ختم ہو گئی لیکن اس کے ہاتھ معذور ہی رہے۔گیری کا کہنا ہے کہ ”مجھے بچپن سے بتایا گیا کہ میرے ساتھ جو ہوا وہ خدا کی مرضی تھی لیکن میں سوچتا ہوں کہ اگر میری ماں نے وہ ٹیسٹ نہ کروایا ہوتا تو شاید میری یہ حالت نہ ہوتی۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...