بینک آف پنجاب، سندھ انٹرپرائز ڈویلپمنٹ فنڈمیں ایم او یو طے 

        بینک آف پنجاب، سندھ انٹرپرائز ڈویلپمنٹ فنڈمیں ایم او یو طے 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

کراچی(خصوصی رپورٹ) دی بینک آف پنجاب(بی اوپی) اور سندھ انٹر پرئز ڈویلوپمنٹ فنڈ (ایس ای ڈی ایف) کے مابین بی او پی کارپوریٹ آفس، اسکائی ٹاور، کلفٹن، کرا چی میں باضابطہ طور پر باہمی تعاون کی ایک یاداشت پر دستخط ہوئے۔ اس باہمی تعاون کا مقصد صوبہ سندھ میں ایس ای ڈی ایف کے ذریعے شناخت کردہ ترجیحی کاروباری طبقات کو مشترکہ طور پر بر مبنی پراجیکٹ رعاعتی ریٹ پر قرضہ جات فراہم کرنا ہے۔ اس سے نہ صرف اجتماعی ر مہارتوں اور طاقتوں کا فائدہ اٹھایا جا سکے گا بلکہ چھوٹے اور درمیانہ درجہ کے کاروباروں کی ترقی، سرمایہ کاری کو راغب کرنے اور سندھ میں معاشی خوشحالی کیلئے ساز گار ماحول بھی پیدا ہو گا۔دستخط کی تقریب کے دوران، بی او پی کے صدر اور سی ای او ظفر مسعود اور ایس ای ڈی ایف کے سی ای او خضر پرویز نے اس باہمی اشتراک کے نتیجہ میں صوبہ سندھ میں ممکنہ معاشی ترقی پر بھی غور کیا۔صدراور سی ای ادظفر مسعودنے سندھ میں اہل قرض دہندگان کو مارک اپ سبسڈی دینے کے ایس ای ڈی ایف کے اقدام کو سراہااورکہا یہ کس طرح مشکل معاشی حالات کے درمیان ان کی ترقی کو سہارا دیگا۔انہوں نے ۲۰۲۲اور۲۰۲۳ میں پاکستان بینکنگ ایوارڈ (پی بی اے) کی جانب سے بی اوپی کو چھوٹے اور درمیانہ درجہ کے کاروبار کیلئے پاکستان کا بہترین بینک قرار دیئے جانے پر روشنی ڈالی اورایس ایم ای کی ترقی کیلئے ہر ممکن تعاون کے بی اوپی کے عزم کا اعادہ کیا۔مزید برآں ایشیا منی نے بھی ۲۰۲۳ میں بی او پی کو پاکستان میں ایس ایم یز کیلئے بہتریں بینک کے طور پر تسلیم کیا۔ ظفر مسعود نے اس تمام تر ترقی کا سہرا بینک کے منظم طریقہ سے جدید وسائل کے موثر استعمال اور رئیل ٹائم بینکینگ سلوشنزکے زریعے مالی شمولیت کو فروغ دینے اور ایس ایم یز کیلئے حل پیش کرنے کو قرار دیا۔ایس ای ڈی ایف کے سی ای او خضر پرویز نے ایس ایم ایز کو مالی شمولیت کے مواقع فراہم کرنے میں بی او پی کی کوششوں کو سراہا، ایس ایم ایز کے اہم کردار پر زور دیا اور کہا یہ انتظام سندھ میں معاشی ترقی کو متحرک کرنے کے بی اوپی کے عزم کا ثبوت ہے۔ دی بینک آف پنجاب کیساتھ شراکت داری کرکے، ان کا مقصد نئے مواقع کو کھولنا اور خطے میں ایس ایم ایز کی پائیدار ترقی میں اپنا حصہ ڈالنا ہے۔

بینک آف پنجاب

مزید :

صفحہ آخر -