جنوبی پنجاب ، کھاد بحران تیز، کسان دربدر، ڈیلرز مالا مال

  جنوبی پنجاب ، کھاد بحران تیز، کسان دربدر، ڈیلرز مالا مال

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 رحیم یارخان،مظفرگڑھ، محسن آباد( بیورو رپوٹ سٹی رپورٹر،نمائندہ پاکستان)کھاد کی بوری 3750 روپے کی بجائے 5200 روپے میں فروخت ہو رہی ہے کسانوں کا کہنا ہے کہ ڈیلر اور ذخیرہ اندوز مصنوعی قلت کا جواز بنا کر کھاد کو بلیک میں فروخت کر رہے ہیں،مہنگائی نے پہلے ہی کمر دہری کردی ہے ،کھاد کے بحران پر ادارے خاموش کیوں ہیں۔کسانوں کے مطابق(بقیہ نمبر5صفحہ7پر )

 حکومت نے دعوی کیا تھا کہ گندم کی پیداوار بڑھا کر اس سال نہ صرف خود کفالت حاصل کریں گے بلکہ فاضل گندم برآمد بھی کی جائے گی لیکن یہ دعوی الٹ ہوتا دکھائی دینے لگا ہے ۔ 15 دسمبر تک گندم کو پہلے پانی کے ساتھ جو کھاد دی جاتی ہے وہ دستیاب نہیں ۔ کسان سخت پریشان ہیں ،انہیں خدشہ ہے کہ فی ایکڑ پیداوار بہت کم ہوگی دوسری جانب نگران وزیر زراعت پنجاب نے کہا ہے کہ ڈیلرز اور ڈسٹری بیوٹرز جان بوجھ کر بدمعاشی کر رہے ہیں، جو ڈسٹری بیوٹر یوریا بلیک کرتا ہوا پکڑا گیا اس کا لائسنس منسوخ ہوگا اور گرفتاری بھی ہوگی جبکہ نگراں وزیرداخلہ سرفراز بگٹی نے اس بحران کو مصنوعی قرار دے دیا ہے۔کسانوں کا کہنا ہے کہ یوریا کھاد کی قیمتوں کو پر لگ گئےہیں ، یہ ایک سال میں ہی 2500 روپے سے 5200 تک جاپہنچی ہے۔انتظامیہ زبانی دعوں کے سواکچھ نہیں کر رہی یہی حال رہا تو گندم کی فصل کو دوسری بار کھاد دینا ممکن نہیں ہو گا جس سے پیداواری بری طرح متاثر ہوگا۔ ڈپٹی کمشنر میاں عثمان علی اور ڈپٹی ڈائریکٹر زراعت رانا حبیب الرحمن کی ہدایت پر اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت ملک عبد الرزاق نے گزشتہ روز کھاد مافیا کے خلاف ایک بڑی کاروائی کی۔ اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت ملک عبد الرزاق نے خانپور،مراد آباد،ہیڈ محمد والا،رنگ پور،اور جوانہ بنگلہ میں کھاد کی دکانوں کو چیک کیا۔ اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت ملک عبد الرزاق نے کھاد کی دکانوں اور گودام میں کھاد کے سٹاک اور نرخ نامہ چیک کیا۔ ذخیرہ اندوزی اور گرانفروشی کرنیوالے ڈیلرز کے خلاف کاروائی کرتے ہوئے 1 لاکھ 75 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا۔ خانپور میں کھاد زیادہ قیمتوں پر فروخت کرنے والے 2 دکانداروں کے خلاف استغاثہ جات جمع کرائے گئے۔ کھاد کا معیار چیک کرنے کیلئے کھاد کے نمونے لیبارٹری بھجوائے گئے۔اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت ملک عبد الرزاق نے کہا کہ کسی کو بھی کھاد کی زخیرہ اندوزی اور گرانفروشی کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ڈپٹی کمشنر میاں عثمان علی کی ہدایت پر کھاد مافیا کے خلاف بلاامتیاز کارروائیاں جاری رکھی جائیں گی۔یب بچا تحریک کے روح رواں پیپلزلائرز فورم کے ضلعی صدر مرزا محمدامین خان ایڈووکیٹ نے ضلع بھر میں یوریا کھاد کے بڑھتے ہوئے بحران کے پیش نظر تحریک کو کسان بچا تحریک میں تبدیل کردیا۔ ان کی قیادت میں سینکڑوں افراد نے یوریا کھاد کے بڑھتے ہوئے بحران کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ اس موقع پر انہوں نے ریلی کے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت گندم کی کاشت کے موقع پر کاشتکاروں کو یوریا کھاد فراہم کرنے میں ناکام ہوچکی ہے۔افسران کی سرپرستی میں مہنگے داموں یوریا کھاد کی بلیک میں فروخت سراسر کسانوں کا استحصال ہے جسے ناکام بنانے کیلئے وہ اپنے فورم کا بھرپور استعمال کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری نرخوں پر یوریا کھاد کی فراہمی یقینی نہ بنائی گئی تو احتجاجی تحریک کا دائرہ کار بڑھاتے ہوئے ضلع بھر میں مظاہرے کئے جائیں گے۔انہوں نے ضلعی انتظامیہ کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ یوریا کھاد کی فراہمی کو یقینی بناکر کاشتکاروں کے معاشی استحصال کا خاتمہ کیاجائے۔اس موقع پرضلعی انفارمیشن سیکرٹری پیپلزلائرز فورم شوکت خان رند نے بھی خطاب کیا۔