کشمیریوںکو پاک بھارت مذاکرات میں شامل کیاجائے: غلام نبی فائی

کشمیریوںکو پاک بھارت مذاکرات میں شامل کیاجائے: غلام نبی فائی

سری نگر (اے پی پی) واشنگٹن میں منعقد ہ ایک سیمینار کے مقررین نے مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے پاک بھارت مذاکراتی عمل میں کشمیریوں کو شامل کرنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق کشمیری امریکن کونسل کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر غلام نبی فائی نے سیمینار سے خطاب میں کہا کہ امریکہ سمیت عالمی برادری کو پاکستان اور بھارت پرزور دینا چاہیے کہ وہ اپنے مذاکرات میں کشمیریوں کو شامل کریں تاکہ مسئلہ کشمیر کو پرامن طریقے سے حل کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں نے گزشتہ 67برسوں کے دوران کشمیرکاز کے لیے بیش بہا قربانیاں دی ہیں اور پاکستان اور بھارت کو یہ حقیقت تسلیم کر لینی چاہیے کہ کشمیریوں کو شامل کیے بغیر مذاکراتی عمل ہرگز نتیجہ خیزثابت نہیں ہو سکتا۔ ورلڈ کشمیر فریڈم موومنٹ کے صدر ڈاکٹر غلام نبی میر نے کہا کہ کشمیری ایک ایسے ملک کے ساتھ نہیں رہنا چاہتے جس نے انہیں زبرستی اپنے ساتھ رکھنے کے لیے روز اول سے جبر و استبداد کا نشانہ بنایا ۔ آزاد جموںو کشمیر کے وزیر اعظم کے سابق مشیر سردار سوارخان نے کہا کہ عالمی برادری کو کشمیریوں کی مشکلات کا نوٹس لینا چاہیے ۔ ناروے کے رکن پارلیمنٹ لارس رائز نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے پر امن حل کے لیے کشمیری عوام پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک پل کا کردار ادا کر سکتے ہیں۔کشمیری امریکن کونسل کے نائب صدر ڈاکٹر امتیاز خان نے بھارت سے مطالبہ کیا کہ وہ تمام کشمیری سیاسی نظر بندوںکو رہا ، کالے قوانین کو منسوخ ، قصبوں اور دیہات میں موجود بنکروں کو ختم اور کشمیریوں کو اظہار رائے کی آزادی کا حق دے۔

سیمینار کے میزبان سردار طاہر اقبال نے کہا کہ کشمیری اپنے جذبات کے اظہار کا پیدائشی حق رکھتے ہیں جو ان سے ہرگز چھینا نہیں جاسکتا۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے اسد چودھری نے کہا کہ اقوام متحدہ کی قرار دادوں میں مسئلہ کشمیر کا بہترین حل موجود ہے۔پاکستان تحریک انصاف کے مظہر چغتائی نے کہا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر موجود سب سے پرانا مسئلہ ہے۔ انہوں نے تنازعہ کشمیر کے کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق حل پر زور دیا۔ڈاکٹر ذولفقار کاظمی، علی رضا بخاری، سردار گلفراز خان،ڈاکٹر زاہد بخاری، سردار زبیر خان، سردار ظریف خان، میاں وسیم، سردار زوالفقار خان، راجہ لیاقت کیانی، سردار ظہور خان، اورنگ زیب خان، سردار اسحاق شریف، زاہد حمیدی، عارف اللہ ، سردار علی، اسد کمال ، دس سالہ طالب علم ہاشم خان اور دیگر نے بھی سیمینار سے خطاب کیا۔ مقررین نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کی وجہ سے جنوبی ایشیا کے امن واستحکام کو شدید خطرہ لاحق ہے اور اس مسئلے سے کشمیریوں کا مستقبل وابستہ ہے۔ انہوں نے بھارتی فوجیوں کی طرف سے مقبوضہ کشمیر میںجاری انسانی حقوق کی شدید خلاف ورزیوں پر شدید تشویش ظاہر کی۔ سیمینار کا انعقاد کشمیر فورم نے کیا تھا اور کشمیری امریکن کونسل، پیپلز پارٹی پاکستان ، آزاد کشمیر، جموںو کشمیر مسلم کانفرنس، جموںو کشمیر لبریشن فرنٹ، جموںو کشمیر مسلم لیگ، جماعت اسلامی آزاد کشمیراور جموںو کشمیر لبریشن لیگ نے سیمینار کے انعقاد میں تعاون کیا تھا۔

مزید : عالمی منظر