بھارت کی دہری پالیسی ۔۔۔بلائنڈ ٹیم پاکستان آ سکتی ہے توقومی کیوں نہیں؟

بھارت کی دہری پالیسی ۔۔۔بلائنڈ ٹیم پاکستان آ سکتی ہے توقومی کیوں نہیں؟
بھارت کی دہری پالیسی ۔۔۔بلائنڈ ٹیم پاکستان آ سکتی ہے توقومی کیوں نہیں؟

  


لاہور(افضل افتخار) بھارت کی بلائنڈ کرکٹ ٹیم آج کل پاکستان کے دورے پر آئی ہوئی ہے ایک طرف تو بھارتی کرکٹ ٹیم اپنی ٹیم کو پاکستان میں کھیلنے سے کافی دیر سے انکار کررہی ہے دوسری طرف پاکستان میں انہوں نے اپنی بلائنڈ کرکٹ ٹیم بھجوائی ہے وہ کافی عرصہ سے پاکستان میں امن و امان کا رونا رو رہا ہے لیکن بلائنڈ کرکٹ ٹیم کو بھیجنے پر ان کے خدشات کیسے دو ر ہوجاتے ہیں اس حوالے سے اظہار خیال کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور مایہ ناز بیٹسمین ظہیر عباس نے کہا کہ یہ بھارتی کرکٹ ٹیم کی دوہری پالیسی ہے وہ بلائنڈ کرکٹ ٹیم کو اس لئے بھیج رہا ہے کہ ان کے شائقین کی تعداد نہیں ہے اور ان کی جانوں کو کوئی خطرہ نہیں ہے اور یہ میچز دیکھنے کےلئے سٹیڈیم میں رش بھی نہیں ہوتا ہے لیکن میرے خیال میں ان کھلاڑیوں کو بھی سیکورٹی کی ضرورت ہے ظہیر عباس نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ بھارتی کرکٹ ٹیم بھی پاکستان کا دورہ کرے کیونکہ ان کو یہاں پر سیکورٹی دی جائے گی سابق کرکٹر یاسر حمیدنے کہا کہ بھارت کرکٹ بورڈ جس طرح بلائنڈ ٹیم کوبھیج رہا ہے اسی طرح اس کو اپنی قومی کرکٹ ٹیم کو بھی ضرور بھیجنا چاہئیے کیونکہ اس وقت ضرورت اس ٹیم کے دورہ پاکستان کی زیادہ ہے اور امید ہے کہ بلائنڈکرکٹ ٹیم کے بعد اب بھارتی ٹیم پاکستان کا دورہ کرے گی جس کا شائقین کافی عرصہ سے شدت سے انتظار کررہے ہیں انہوں نے کہا کہ غیر ملکی ٹیموں کو پاکستان کا دورہ کرنا چاہئیے اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے لٹل ماسٹر حنیف محمد نے کہا کہ پاک بھارت کرکٹ میچز ہونے چاہئیے اس طرح دونوں ملکوں کی عوام بھی ایک دوسرے کے قریب آئیں گے انہوں نے کہا کہ بلائنڈ کرکٹ ٹیم کے کھلاڑیوں کو حکومت پاکستان مکمل سیکورٹی فراہم کررہی ہے اور امید ہے کہ یہ دورہ کامیابی سے ہمکنار ہوگا اور وہ یہاں سے پر امن وطن واپس جائیں گے جس کی وجہ سے پاکستان کا امیج بہتر ہوگا اور اس طرح دیگر غیر ملکی ٹیموں کے کھلاڑی بھی پاکستان آئیں گے اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان کھیلوں کےلئے پر امن ملک ہے دوسری طرف شائقین کرکٹ کا بھی کہنا ہے کہ پاکستان کی ٹیم کئی مرتبہ بھارت جاچکی ہے اور اب جس طرح بلائنڈ کرکٹ ٹیم نے پاکستان کا دورہ کیا ہے یہ خوش آئند ہے لیکن ضرورت اس بات کی ہے کہ بھارت کی قومی کرکٹ ٹیم بھی جلد از جلد پاکستان کا دورہ کرے جس کا ہمیں شدت سے انتظار ہے اس حوالے سے مجید اور شریف نے کہا کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کا شدت سے انتظار ہے اور امید ہے کہ یہ سال واپسی کا سال ثابت ہوگا اکبر اور عامر نے کہا کہ پاکستان کھیلوں کے لئے پر امن ملک ہے بھارتی کرکٹ بورڈ نے جہاں اپنی بلائنڈ ٹیم کو پاکستان بھیج دیا ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ اب و ہ اپنی قومی ٹیم کو بھی وعدے کے مطابق پاکستان کھیلنے کےلئے بھیجے جس طرح بلائنڈکھلاڑیوں کےلئے پاکستان پر امن ہے اور ان کو کوئی خطرہ نہیں ہے اسی طرح بھارت کی قومی ٹیم کے کھلاڑیوں کے لئے بھی پر امن ہے اور ان کو کو ئی خطرہ نہیں ہے ۔

مزید : کھیل