پاکستان :کھجور کے نئے باغات لگانے کاسلسلہ شروع

پاکستان :کھجور کے نئے باغات لگانے کاسلسلہ شروع

  

فیصل آباد(بیورورپورٹ )بین الاقوامی منڈیوں میں کھجور کی بڑھتی ہوئی مانگ کے پیش نظر پاکستان میں وسیع پیمانے پر کھجور کے نئے باغات لگانے کاسلسلہ شروع کردیا گیا ہے جہاں سے بھرپور پیداوار حاصل کرکے اس کی ایکسپورٹ میں زیادہ سے زیادہ اضافہ یقینی بنایاجائیگاتاکہ ملک کیلئے شاندار زرمبادلہ کاحصول ممکن ہوسکے۔ جامعہ زرعیہ فیصل آباد کے ماہرین اثمار نے بتایاکہ کھجور کا پھل اپنی بھر پور غذائیت کی وجہ سے کرہ ارض پر پیداہونے والے پھلوں میں بہت تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔ انہوں نے بتایاکہ کھجور کی زیادہ پیداوار کے حصول میں زر پاشی کا عمل بنیادی حیثیت رکھتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ عام طورپر کھجور کے پودوں میں عمل زیرگی قدرتی طورپر حشرات (شہد کی مکھی ) ، پرندوں اور ہوا کے ذریعے ہوتا ہے جبکہ کھجورمیں نر اور مادہ پودے الگ الگ ہوتے ہیں لہٰذاباغبان نئے باغات لگاتے وقت نر اور مادہ پودوں کا 1اور10کاتناسب رکھیں ۔

انہوں نے بتایاکہ کھجور کے زیر کاشت رقبہ میں مسلسل اضافہ کے باعث زر پاشی کے لیے نر زردانوں کا حصول مشکل ہوتاجارہا ہے اس لیے باغبانوں کو کھجور میں زر پاشی کے مصنوعی طریقوں کو اختیار کرناہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ کھجور کے پھول سیپی نما خول میں پیدا ہوتے ہیں اور یہ سپییاں 15فروری سے مارچ کے آخر تک کھلتی ہیں نیزچونکہ نر سپیاں مادہ سپیوں سے دس دن پہلے نکلتی ہیں لہٰذا مصنوعی زر پاشی کے لیے نر پودے کی تیار سپیوں کوکاٹ کر سایہ میں ہوا دار جگہ پر محفوظ کرلیاجائے اور ان نر سپیوں سے پھولوں کی لڑیاں نکال کر انہیں نمی سے پاک سایہ دار جگہ پر خشک کرکے نر زردانوں کوپاؤڈر کی شکل میں شیشے کے ہوا بند جار یا کاغذ کے تھیلوں میں محفوظ کرلیاجائے۔

مزید :

کامرس -