سول انجینئرنگ جلوزئی کیمپس پر کوئی پابندی نہیں لگائی گئی

سول انجینئرنگ جلوزئی کیمپس پر کوئی پابندی نہیں لگائی گئی

پشاور( سٹاف رپورٹر )یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی پشاور کے ترجمان نے سول انجینئرنگ جلوزئی کیمپس کے طلباء میں پائی جانی والی غلط فہمی کو دور کرتے ہوئے اپنے وضاحتی بیان میں کہا کہ انجینئرنگ یونیورسٹی پشاورکے جلوزئی کیمپس کے سول انجینئرنگ پروگرام پر ہائر ایجوکیشن کمیشن اسلام آباد کی جانب سے کوئی پابندی نہیں لگائی گئی ہے اور نہ ہی ہائر ایجوکیشن کمیشن اسلام آباد کی جانب سے یونیورسٹی کو اس سلسلے میں مطلع کیا گیا ہے۔گذشتہ سال صوبائی حکومت نے انجینئرنگ یونیورسٹی کوجلوزئی کیمپس میں دہشت گردی کے خطرات سے بچنے کیلئے ضروری سیکورٹی اقدامات کی ہدایت کی۔ جسکی بناء پر جلوزئی کیمپس کے طلباء کو مین کیمپس پشاور عارضی طور پر منتقل کردیا گیا ۔جن کی تعلیمی سرگرمیاں جاری ہیں۔ حکومت کی جانب سے بتائے گئے بیشتر سیکورٹی اقدمات مکمل کر لئے گئے ہیں ۔اور صوبائی حکومت سے اجازت ملنے کے بعد جلد ہی جلوزئی کیمپس میں تعلیمی سرگرمیاں بحال کر دی جائی گی۔یونیورسٹی ترجمان نے مزیدکہا کہ حکومت اور انجینئرنگ یونیورسٹی کا موقف ایک ہی ہے اور طلباء کا مستقبل اور انکی سیکورٹی ہماری اولین ترجیح ہے ۔ انہوں نے طلباء کی یقین دہانی کیلئے کہا کہ وہ اپنی پڑھائی کو جاری رکھیں۔انہوں نے وضاحت کی کہ اس سے قبل مردان اور بنوں کیمپس کے انجینئرنگ پروگرامز کے بارے میں پاکستان انجینئرنگ کونسل کے کچھ تحفظات تھے ۔ ان تحفظات کو موجودہ وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین کی کاؤشوں سے نہ صرف دور کردیا گیا ہے بلکہ پاکستان انجینئرنگ کونسل کی جانب سے ان ڈیپارٹمنٹس کو ایکری ڈیٹیشن بھی مل چکی ہے جو کہ باقاعدہ طور پر پاکستان انجینئرنگ کونسل کے ویب سائٹ پر شائع ہے ۔اسی طرح جلوزئی کیمپس کے سول انجینئرنگ پروگرام اور کوہاٹ کیمپس کے الیکٹریکل انجینئرنگ پروگرام کے حوالے سے پاکستان انجینئرنگ کونسل کے تحفظات کو قواعد و ظوابط کے مطابق دور کیا جا رہا ہے ۔ اس سلسلے میں چےئرمین پاکستان انجینئرنگ کونسل کیساتھ رابطہ کیا گیا ہے جس پر انہوں نے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے اور جلد ہی ان پروگرامز کو بھی پاکستان انجینئرنگ کونسل کی جانب سے ایکری ڈیٹیشن مل جائیگی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر