فاٹامیں 34ارب 87کروڑ روپے خرچ کرنا ڈرامہ ہے :سیاسی قائدین

فاٹامیں 34ارب 87کروڑ روپے خرچ کرنا ڈرامہ ہے :سیاسی قائدین

  

خیبر ایجنسی (بیورورپورٹ)فاٹا میں دو سالوں میں ترقیاتی کا موں پر 34ارب 87کروڑ روپے خرچ کر نا ڈرامہ ہے،ہیلتھ ایجوکیشن سمیت تمام اداروں کی کارکردگی نہ ہونے کی بر ابر ہے ،کسی میگا پراجیکٹ پر کام نہیں کیا گیا جس سے قبائلی عوام کو فائدہ پہنچ سکے ،اربوں روپے کاغذات میں خرچ کئے گئے ہیں گراونڈ پر کچھ بھی نہیں ہیں ،اربوں روپے خرچ کر نے سے قبائلی عوام کی تقدیر بدل سکتی تھی لیکن یہ قبائلی عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی مترادف ہیں ،حکومت تفصیلات جاری کریں کہ کہا پر اربوں روپے خرچ کئے گئے ہیں ،مختلف سیاسی پارٹیوں قائدین کا رد عمل گز شتہ رو ز حکومت نے ایک بیان جاری کر تے ہوئے دعوی کیا تھا کہ وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقہ جات میں گز شتہ دو سالوں میں ٹوٹل 35ارب 70کروڑ روپے میں 34ارب 87کروڑ روپے تر قیا تی کاموں پر خر چ کئے گئے ہیں جس میں تعلیم پر 13ارب22کروڑ روپے اور صحت پر 1ارب86کروڑ روپے خرچ کئے گئے ہیں جبکہ باقی دوسرے ترقیاتی کاموں پر خرچ کئے گئے ہیں تاہم قبائلی علاقوں میں کسی قسم کی تبدیلی نظر نہیں آرہی ہیں قبائل علاقوں کے تما م ہسپتالوں میں سہولیا ت کی فقدان اور سٹا ف کی کمی کی وجہ سے معمولی مریضوں کو پشاور ہسپتالوں میں لے جاتے ہیں اور ایجنسی ہیڈ کوارٹرز ہسپتالوں میں اسپشلسٹ ڈاکٹروں کی پوسٹیں گز شتہ دس سالوں سے خالی پڑی ہیں اس طرح سکولوں میں اساتذہ کی کمی اور دوسرے سہولیات کی کمی سے یا تو بچے سکولوں میں جاتے نہیں یا زیادہ تر والدین نے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں میں داخل کر دئیے گئے ہیں پورے فاٹا میں لاکھوں بچے سکولوں میں نہیں جاتے قبائلی علاقوں میں بجلی چوبیس گھنٹوں میں صرف دو گھنٹوں کیلئے آتی ہیں لیکن قبائلی عوام پینے کے صاف پانی کیلئے ترس گئے پورے فاٹا میں مختلف سکیموں کے برائے نام افتتاح ہو رہے ہیں اس سلسلے میں جمعیت علماء اسلام فاٹا کے امیر عبدالشکور بٹنی نے بتا یا کہ اربوں روپے کہا پر خرچ کئے گئے ہیں گراونڈ پر تو کچھ بھی نظر نہیں آرہا ہے فاٹا میں ترقیا تی کاموں پر بھی کاروبار ہو رہا ہیں تمام ڈیپا رٹمنٹس تر قیا تی کاموں پر کاروبا ر کر رہے ہیں فاٹا سیکرٹریٹ میں سب کچھ غائب ہو جاتے ہیں جماعت اسلامی فاٹا کے امیر سردار خان نے کہا کہ قبائلی علاقوں میں ہسپتال نہیں سکول نہیں کہا پر خرچ کئے ہیں قبائلی عوام کی حالات دن بدن خراب ہو تے جا رہے ہیں ایک میگا پراجیکٹ دیکھائے سب گپ شپ ہیں ساٹھ سالوں میں کسی تر قیاتی منصوبے پر کام نہیں کیا گیا ہیں عوامی نیشنل پارٹی خیبر ایجنسی کے صدر شاہ حسین شنواری نے کہا کہ صرف کاغذات میں ترقیا تی کاموں اربوں روپے خرچ ہو رہے ہیں گراونڈ پر کچھ بھی نہیں ہے حکومت تفصیلات جاری کریں کہ کہا کہا پر روپے خرچ کئے گئے ہیں قبائلی علاقوں میں تمام اداروں کی کارکردگی صفر ہیں حقیقت میں 34 ارب روپوں سے قبائلی عوام کی بہت مسائل حل ہو سکتے تھے لیکن سب جھوٹ اور قبائلی عوام کو دھوکہ دے رہے ہیں ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -