شہباز شریف کے بغیر پنجاب لاوارث ہی نہیں یتیم ہو گیا، میرا جینا مرنا پاکستان کے ساتھ ہمیں بیک ڈور رابطوں کی ضرورت نہیں: مریم نواز

شہباز شریف کے بغیر پنجاب لاوارث ہی نہیں یتیم ہو گیا، میرا جینا مرنا پاکستان ...

  

لاہور،وزیر آباد(نا مہ نگار،نمائندہ خصوصی)  وزیرآبادکے عوام سے ووٹ مانگنے نہیں آئی نواز شریف، شہباز شریف کا دور یاد کرانے آئی ہوں،مریم پر پنجاب کارڈ کھیلنے کا الزام لگایا جارہا ہے مریم پنجاب کی بیٹی ہے پنجاب کی بات کیوں نہ کرے۔،شہباز شریف کے بغیر پنجاب لاوارث ہی نہیں ہوا یتیم ہوگیا ہے،دیہاڑی دار، دکاندار،تاجر، مزدور کاروباری طبقہ سب آج خوار ہورہے ہیں،میری بہنوں کے پاس آٹا، تیل، دوائیوں کیلئے پیسے نہیں۔ میڈیا، ڈاکٹر تمام طبقات خوار ہیں۔پورا پاکستان رورہا ہے،لوگ سلیکٹرز سے پوچھتے ہیں ہمارے اوپر مسلط کرنے کیلئے یہی سوغات ملی تھی،میں بھی سیلیکٹرز سے کہتی ہوں '' ہن آرام اے؟جب سیلیکٹرز کو لوگ برا بھلا کہتے ہیں تو مجھے دکھ ہوتا ہے آخر ادارہ تو ہمارا ہے۔ان خیالات کا اظہار پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے وزیرآباد میں امیدوار پی پی51بیگم طلعت شو کت کے انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پررانا ثناء اللہ،کیپٹن (ر) صفدر،ڈپٹی جنرل سیکرٹری عطاء اللہ تارڑ ایڈووکیٹ،خرم دستگیر،عابد  رضا آف کوٹلہ،مریم اورنگزیب، ایم این اے ڈاکٹر نثار احمد چیمہ،ضلعی جنرل سیکرٹری شازیہ سہیل میر،بیگم طلعت شوکت،سائزہ افضل تارڑ،ایم پی ایز عادل بخش چٹھہ،بلال فاروق تارڑ،ضلعی صدر مستنصر علی گوندل ایڈووکیٹ،سابق چیئرمین بلدیہ خواجہ محمد جمیل ایڈووکیٹ،سابق چیئرمین بلدیہ بابو شعیب ادریس،تحصیل صدر اعجاز احمد پرویا،صدر مرکزی تنظیم تاجران ناصر محمود اللہ والے،سنیئر نائب صدر محمد اکبر بٹ،کرنل (ر) وقار انور شیخ،شیخ بلال احمد،میر ماجد علی سالار،امتیاز اظہر باگڑی،خواجہ محمد شعیب،افتخار احمد بٹ،میاں مدثر نذیرسمیت ہزاروں کارکنان بھی موجود تھے۔مریم نواز نے کہا کہ چینی چوروں کے بعد چہیتے چوروں نے 500ارب کی ادویات چوری کرلیں۔ 15ہزار ارب روپے کا قرضہ لے لیا ایک چیز بھی نہیں بنائی۔شہباز شریف نے پ سڑکیں بنائیں پکیاں سڑکاں سوکھے پینڈے اور عمران خان ٹوٹی سڑکیں سوکھے پینڈے ایک ٹوٹی پھوٹی میٹرو کے سوا اس حکومت نے کچھ نہیں بنایا۔پورا ٹبر چور کا نعرے  لگانے والے کی پوری جنج چور ہے۔عوام ریلیف مانگتی ہے تو انہیں جواب دیتا ہے مرغیاں دوں گا کٹے دوں گا، انڈے دوں گا۔آج اپوزیشن والے ہی نہیں خود اس کی پارٹی کے لوگ بھی جھولیاں اٹھا کر بددعائیں دے رہے ہیں۔میری بائیس سال کے جدوجہد کا راگ الاپنے والے نے سینیٹ میں کسی اپنے پرانے ساتھی کو ٹکٹ نہیں دیا۔ کروڑ پتی لوگوں کو ٹکٹ دیا ہے۔عمران خان نے اپنا خرچہ نہ اٹھا سکنے والوں کو ٹکٹ نہیں دیا۔مسلم لیگ ن تحریک انصاف کے پرانے ساتھیوں کیساتھ اظہار ہمدردی کرتی ہے۔میاں محمد نواز شریف کو کہا گیا کہ بیگم طلعت شوکت سادہ خاتون ہیں وہ فراڈیوں کا مقابلہ نہیں کرسکیں گی تو میاں  صاحب نے کہا کہ ہمارے ٹکٹ کی سب سے بڑی حقدار یہی خاتون ہیں ہم اپنے ورکرز، ساتھیوں کی قدر کرتے ہیں۔محمد نواز شریف کی بیٹی خود بیگم طلعت کے الیکشن کی کمپین کرے گی۔اس سے قبل لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا  ہے کہ حکمران جماعت میں ٹکٹوں کی تقسیم پر ہر صوبے سے لوگ کھڑے ہو گئے ہیں،کیا 22سالہ جدوجہد میں ایک بھی ایسا انسان نہیں ملا جس کو آپ سینیٹ کا ٹکٹ دیتے، آپ نے کروڑ پتی اور ارب پتی لوگوں کو ٹکٹ دیے،  جن لوگوں نے جماعت کے لیے کوئی جدوجہد نہیں کی انہیں کہا جا رہا ہے کہ اپنے پیسوں سے ٹکٹ خریدو،یوسف رضا گیلانی پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے متفقہ امیدوار ہیں،  عوام پر جو لوگ مسلط کیے جارہے ہیں، ہمیں عوام کا نمائندہ ہونے کی حیثیت سے ان کا راستہ روکنا ہے، مہنگائی سے مارے عوام میں اضطراب اور بے چینی ہے،پی ڈی ایم یا مسلم لیگ(ن)کو بیک ڈور رابطوں کی ضرورت نہیں ہے۔ پی ڈی ایم نے یہ فیصلہ کیا تھا کہ وہ اپنے متفقہ امیدوار لائیں گے اور ایک دوسرے کو سپورٹ کریں گے۔ مریم نواز نے کہا کہ حکمران جماعت میں ٹکٹوں کی تقسیم پر ہر صوبے سے لوگ کھڑے ہو گئے ہیں اور جس طرح سے پیراشوٹ سے لوگوں نے لینڈ کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہماری کوشش ہے کہ سنیٹ میں اچھے اور سیاسی لوگ آئیں، وہ لوگ آئیں جن کی سیاسی جدوجہد ہے، مجھے فخر ہے کہ مسلم لیگ(ن)میں سب کارکنوں کو ٹکٹ ملے ہیں اور ایسے لوگوں کو ٹکت ملے ہیں جو کروڑ پتی یا ارب پتی نہیں بلکہ سادہ سے کارکن اور مڈل کلاس سے تعلق رکھتے ہیں۔ مریم نواز نے کہا کہ مسلم لیگ(ن)نے عوام کی صحیح نمائندگی کا حق ادا کیا اور نوز شریف نے کسی ایسے ارب پتی شخص کو ٹکٹ نہیں دیا جو خرید و فروخت کا ماہر ہو، اصل تبدیلی یہ ہے۔ جب ان سے سوال کیا گیا کہ آصف علی زرداری نے سینیٹ الیکشن کے بعد تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کے حوالے سے نواز شریف کو راضی کر لیا ہے تو مریم نواز نے جواب دیا کہ میں جو حالات دیکھ رہی ہوں، یہ نہ ہو کہ سینیٹ الیکشن کے دوران ہی عدم اعتماد ہو جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم کو توڑنے کے خواب دیکھنے والے خود بہت جلد ٹوٹیں گے اور ٹوٹتے ہوئے نظر آ رہے ہیں، یہ بات کافی نہیں ہے کہ صبح ٹکٹ دیتے ہیں اور شام میں واپس لے لیتے ہیں، اگلے دن پھر اپنی ہی جماعت کی جانب سے ایک عدم اعتماد آ جاتی ہے، اپوزیشن کم بول رہی ہے اور ان کی جماعت زیادہ بول رہی ہے۔ مسلم لیگ(ن)کی رہنما نے کہا کہ میرا صحت کا مسئلہ ہے جس کی وجہ سے میری ایک سرجری ہونی ہے جو پاکستان میں نہیں ہو سکتی لیکن میں اس حکومت سے بالکل نہیں کہوں گی کہ میرا نام ای سی ایل سے نکالے، مجھے اس ملک سے کہیں نہیں جانا، میرا جینا مرنا اس ملک کے ساتھ ہے، مریم باہر نہیں جائے گی، آپ کو جانا پڑے گا۔

مریم نواز

مزید :

صفحہ اول -