پٹرولیم مصنوعات کی قمتیں بڑھانے کی تجویز مسترد، عوام کو ریلیف دینے کیلئے کسی بھی حد تک جائیں گے، سینیٹ کی ٹکٹوں پرنظر ثانی کا فیصلہ کر لیا: عمران خان 

      پٹرولیم مصنوعات کی قمتیں بڑھانے کی تجویز مسترد، عوام کو ریلیف دینے ...

  

 اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک،آ ن لائن) وفاقی حکومت نے  پٹرولیم مصنوعات کی   قیمتوں  کو برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔  ترجمان وزیر اعظم ہاؤس کے مطاب عوام کو ریلیف کی فراہمی کے لئے وزیرِ اعظم عمران خان نے اوگرا کی جانب سے پٹرولیم مصنوعات میں مجوزہ اضافے کی تجویز مسترد کر دی۔   اوگرا کی جانب سے  پٹرول کی قیمت میں 14.07روہے، ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 13.61 روپے، کیروسین (مٹی کے تیل کی قیمت میں 10.79روپے اور لائٹ ڈیزل کی قیمت میں 7.43 روپے اضافہ تجویز کیا گیا تھا۔ عوامی فلاح و بہبود کو مد نظر رکھتے ہوئے وزیرِ اعظم نے پٹرولیم مصنوعات میں اضافے کی تجویز منظور نہیں کی۔ وزیرِ اعظم کا کہناہے کہ  حکومت عوام کو ریلیف کی فراہمی کے لئے ہر حد تک جائے گیاس سے قبل وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت بنیادی اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کمی لانے کے حوالے سے حکومتی معاشی ٹیم کا اجلاس ہوا،جس میں بنیادی اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں ممکنہ حد تک کمی لانے کے لئے مختلف مجوزہ اقدامات پر غور خوض کیا گیا۔،اجلاس میں وفاقی وزراء مخدوم خسرو بختیار، ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، اسد، عمر، مشیران ڈاکٹر عشرت حسین، عبدالرزاق داؤد، گورنر سٹیٹ بنک،  معاونین خصوصی ڈاکٹر وقار مسعود، ندیم بابر، تابش گوہر، اور سینئر افسران شریک ہوئے۔ اجلاس میں وزیرِ خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے وزیرِ اعظم کو بتایا کہ ملک میں گندم کی پیداوار اور ملکی ضروریات کو پورا کرنے، سرکاری سطح پر گندم کی خرید، ترسیل، سٹوریج و دیگر انتظامی اخراجات میں واضح کمی لانے کے حوالے سے مفصل پلان تشکیل دینے پر کام جاری ہے اور اس حوالے سے تفصیلی پلان جلد وزیرِ اعظم کو پیش کر دیا جائے گا۔ معاون خصوصی  ڈاکٹر وقار مسعود نے وزیر اعظم کو درآمد شدہ گھی، دالوں اور دیگر  اجناس پر ڈیوٹیز کی شرح اور موجودہ حالات میں حکومت کی جانب سے دی جانے والی چھوٹ پر تفصیلی بریفنگ دی۔ درآمد شدہ گھی  وغیرہ پر ٹیکسوں کے حوالے سے خطے کے دیگر ممالک کا تقابلی جائزہ بھی پیش کیا گیا۔اجلاس میں پٹرولیم مصنوعات کے حوالے سے اوگرا کی جانب سے پیش کی جانے والی سفارشات  پر بھی غور کیا گیا۔وزیرِ اعظم عمران خان نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہ ان کی اولین ترجیح غریب عوام کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ وزیرِ اعظم نے معاشی ٹیم کو ہدایت کی کہ عوام پر پڑنے والے بالواسطہ ٹیکسوں کے بوجھ میں کمی لانے کے حوالے سے آؤٹ آف باکس سلوشن تجویز کیے جائیں تاکہ جہاں غریب افراد پر پڑنے والے بالواسطہ ٹیکسوں کے بوجھ کو کم کیا جا سکے وہاں اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے کہ ملک کی آمدن و اخراجات میں توازن برقرار رکھا جا سکے اور ملک کو مزید قرضوں کی دلدل میں جانے سے بچایا جا سکے۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ ان شعبہ جات پر خصوصی توجہ دی جائے جن کا ملکی آمدن میں شئیر ان کے جائز حصے سے کم ہے۔ گندم اور آٹے کی قیمتوں کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ گندم پر اٹھنے والے انتظامی اخراجات کے ہر پہلو کا تفصیلی جائزہ لیا جائے اور ایسا نظام وضع کیا جائے کہ  اخراجات کی مد میں  غیر ضروری طور پر اٹھنے والے ہر ایک روپے کی بچت کی جائے تاکہ عوام کو کسی بھی غیر ضروری بوجھ سے بچایا جا سکے۔دوسری طرف  وزیراعظم عمران خان نے سینیٹ انتخابات کیلئے دی گئی ٹکٹوں پر نظر ثانی کا فیصلہ کرلیا۔پیر کو وزیراعظم کی زیرصدارت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے پارلیمانی بورڈ کا اجلاس ہوا۔نجی ٹی وکی کے مطابق اجلاس میں سندھ سے فیصل واوڈا کو سینیٹ کا ٹکٹ دیئے جانے پر اراکین پارلیمنٹ بورڈ نے تحفظات کا اظہار کیا۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے  سینیٹ انتخاب کیلئے دی گئی  ٹکٹوں میں تبدیلی کا عندیہ دیا۔وزیراعظم نے کہا کہ سینیٹ انتخابات کیلئے پارٹی ٹکٹ میرٹ پر دیں گے، پارٹی کارکنان کی خواہشات کا احترام کرتے ہیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ کسی پیرا شوٹر کو سینیٹر نہیں بنائیں گے۔ذرائع کے مطابق پی ٹی آئی کے پارٹی ٹکٹوں کی تقسیم سے متعلق فیصلہ آئندہ 24 گھنٹوں میں متوقع ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہصنعتی شعبے میں بھی خوشخبری مستحکم نمو کی عکاس ہے،  زرمبالہ کے ذخائر ریکارڈ سطح پر پہنچ گئے، گزشتہ سال کی نسبت رواں سال جنوری میں 19 فیصد اضافہ ہوا، بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے ایک ماہ کے دوران 2 ارب 27 کروڑ ڈالرز مالیت کی ترسیلات زر بھجوائیں،یہ مسلسل آٹھواں مہینہ ہے جس میں ترسیلات زر کا حجم 2 ارب ڈالر سے زیادہ رہا۔ پیر کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پانے بیان میں  وزیر اعظم عمران خان نے  کہا   کہ جنوری 2021 کے دوران بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے 2 ارب 27 کروڑ ڈالر کی ترسیلات زر بھجوائیں، جو کہ گزشتہ برس کے اسی مہینے کے مقابلے میں 19 فیصد زیادہ ہے، یہ مسلسل آٹھواں مہینہ ہے جس میں ترسیلات زر کا حجم 2 ارب ڈالر سے زیادہ رہا۔ رواں برس اب تک گزشتہ برس کے  مقابلے میں 24 فیصد زائد ترسیلات زر بھجوائی گئی ہیں جو کہ ایک ریکارڈ ہے اور اس پر وہ سمندر پار مقیم پاکستانیوں کے شکر گزار ہیں۔ اپنی دوسری ٹوئٹ میں وزیر اعظم نے لارج اسکیل مینوفیکچرنگ (بڑے پیمانے پر پیداواری شعبہ) کے حوالے سے بھی اچھی خبر بتاتے ہوئے کہا کہ لارج اسکیل مینوفیکچرنگ میں دہرے ہندسے کی نمو دیکھنے میں آئی ہے، دسمبر 2019 کے مقابلے میں دسمبر 2020 میں لارج اسکیل مینوفیکچرنگ میں 11 اعشاریہ 4 فیصد اضافہ ہوا، اس طرح جولائی 2020 سے دسمبر تک لارج اسکیل مینوفیکچرنگ میں 8 فیصد اضافہ ہوا ہے، صنعتی شعبے میں بھی خوشخبری مستحکم نمو کی عکاس ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ صنعتی شعبے سے مسلسل ترقی کی اچھی خبر آرہی ہے۔وزیر اعظم عمران خان نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ گزشتہ سال کے مقابلے میں رواں سال مالی سال ترسیلات زر کی شرح 24 فیصد زیادہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ترسیلات زر 8ماہ سے مسلسل دو ارب ڈالر سے زیادہ ہیں۔ ترسیلات زر جنوری 2020 کے مقابلے میں 19فیصد زیادہ ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بیرون ملک شہریوں کی ترسیلات زر جنوری میں 2.27 ارب ڈالر رہیں۔انہوں نے  کہا کہ دسمبر2020 میں لارج اسکیل مینوفیکچرنگ یونٹ میں دوگنا اضافہ ہوا ہے، دسمبر2019 میں شرح نمو11.4 فیصد تھی۔

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -