حلیم عادل شیخ کو کیوں گرفتار کیا گیا اورمقدمات کتنے دن پہلے درج ہوئے ؟ تفصیلات سامنے آ گئیں 

حلیم عادل شیخ کو کیوں گرفتار کیا گیا اورمقدمات کتنے دن پہلے درج ہوئے ؟ ...
حلیم عادل شیخ کو کیوں گرفتار کیا گیا اورمقدمات کتنے دن پہلے درج ہوئے ؟ تفصیلات سامنے آ گئیں 

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن )سندھ اسمبلی کے حلقہ پی ایس 88 میں ضمنی انتخاب کیلئے پولنگ جاری تھی کہ اس دوران حلیم عادل شیخ بھی حلقے میں پہنچے جہاں کشیدگی ہوئی تاہم بعدازاں پولیس نے انہیں حراست میں لے لیا ، اب پولیس حکام نے تفصیل جاری کرتے ہوئے کہاہے کہ پی ٹی آئی رہنما کو دو مقدمات میں حراست میں لیا گیا ہے جو کہ چھ فروری کو درج ہوئے تھے ۔

تفصیلات کے مطابق ایس ایس پی ملیر عرفان بہادر کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ حلیم عادل شیخ کو باقاعدہ دو مقدمات میں گرفتار کر لیا گیاہے بعدازاں انہیں متعلقہ تھانے میں منتقل کیا جائے گا ۔پولیس حکام کا کہناتھا کہ حلیم عادل شیخ کے خلاف گڈاپ اور میمن گوٹھ تھانے میں دو مقدمات درج ہیں اور دونوں چھ فروری کو درج کیے گئے تھے ۔

گرفتاری کے بعد پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ نے ویڈیو پیغام جاری کر دیاہے جس میں ان کا کہناتھا کہ مجھے ایس ایس پی ملیر نے گرفتار کیاہے ، مجھے باہر نہیں جانے دیا جارہا، پیپلز پارٹی والے ہمارے ووٹرز کو ڈرا اور دھمکا رہے ہیں ، میں وزیراعظم عمران خان کا سپاہی ہوں ، آج صبح ہی ہم نے خدشات ظاہر کر دیئے تھے کہ مجھ پر حملہ کروایا جائے گا ، مراد علی شاہ کے والد نے مرتضیٰ بھٹو پر پولیس کے ذریعے حملہ کروایا تھا ، مجھ پر بھی پولیس کی موجودی میں حملہ کیا گیا ۔

ان کا کہناتھا کہ میں حلقہ پی پی 88 میں موجود ہی نہیں تھا لیکن جب دیکھا کہ پی ٹی آئی کے لوگوں پر حملے کیے جارہے ہیں تو اس وقت میں حلقے میں آیا ، بلاول بھٹو زرداری اور مراد علی شاہ نے پولیس کو ٹاسک دے کر بھیجا ہے ۔

مزید :

قومی -