منور فاروقی، وہ بھارتی کامیڈین جسے اس لطیفے کی سزا دی جارہی ہے جو اس نے سنایا بھی نہیں، اس کی کہانی جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے

منور فاروقی، وہ بھارتی کامیڈین جسے اس لطیفے کی سزا دی جارہی ہے جو اس نے سنایا ...
منور فاروقی، وہ بھارتی کامیڈین جسے اس لطیفے کی سزا دی جارہی ہے جو اس نے سنایا بھی نہیں، اس کی کہانی جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے
سورس:   Facebook/Munawarcomedy

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت میں حالیہ چند سالوں کے دوران ہندوتوا کو جس قدر فروغ ملا ہے اور ہندوانتہاءپسند مسلمانوں کو جس وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنا رہے ہیں، اس پر ہر مسلمان افسردہ رہ جاتا ہے۔ اب بھارت کے معروف کامیڈین منور اقبال فاروقی ہی کو دیکھ لیں جنہیں ایک ایسے لطیفے کی پاداش میں قید و بند کی صعوبتیں برداشت کرنی پڑ رہی ہیں جو انہوں نے سنایا ہی نہیں۔ ٹائم ڈاٹ کام کے مطابق منور فاروقی نے یکم جنوری کو بھارتی ریاست مدھیاپردیش میں ایک پروگرام کیا تھا جہاں ان پر الزام عائد کر دیا گیا کہ انہوں نے ہندو دیوتاﺅں کے بارے میں ہتک آمیز لطیفہ سنایا ہے۔ 

نریندر مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کی رکن اسمبلی مالنی گوڑکے بیٹے ایکلویہ گوڑنے چند دیگر انتہاءپسند ہندوﺅں کے ساتھ مل کر پہلے خود منور فاروقی کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا اور پھر اس کے خلاف پولیس کورپورٹ کر دی اور پولیس نے منور فاروقی کو گرفتار کر لیا، تاہم اس پر تشدد کرنے والے انتہاءپسند آزاد گھوم رہے ہیں۔ منور فاروقی پر تشدد کرنے والوں میں پرکھرویاس، پریم ویاس، نلن یادو اور پروگرام کوارڈی نیٹر ایڈون انتھونی و دیگر شامل ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ منور نے وزیرداخلہ امیت شاہ کے خلاف بھی نازیبا الفاظ استعمال کیے۔

 انڈین ایکسپریس کے مطابق پروگرام میں موجود عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ منور فاروقی نے ہندو دیوتاﺅں کے بارے میں کوئی ہتک آمیز بات کی ، نہ ہی امیت شاہ کے بارے میں۔جینوشا ایگنس نامی ایک شخص نے اپنے انسٹاگرام اکاﺅنٹ پر لکھا ہے کہ ”منور ابھی سٹیج پر پہنچا ہی تھا کہ چند لوگ جن کا تعلق ایک سیاسی جماعت سے تھا، سٹیج پر چڑھ گئے اور منور سے مائیک چھین کر کہنے لگے کہ اس نے گودھرا واقعے پر لطیفے سنائے ہیں اور ہمارے دیوی دیوتاﺅں کا مذاق اڑایا ہے، یہ اسلام پر لطیفے کیوں نہیں سناتا۔ یہ کہہ کر انہوں نے منور کو تشدد کا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔“

مزید :

تفریح -