حکومت کے 150دن بعدبھی سکول ایجوکیشن میں کوئی کام نہ ہوا،طارق محمود

حکومت کے 150دن بعدبھی سکول ایجوکیشن میں کوئی کام نہ ہوا،طارق محمود

لاہور(لیڈی رپورٹر ) یو نائیٹڈٹیچرز کونسل پنجاب کے مرکزی رہنماؤں طارق محمود، اللہ بخش قیصر، حافظ عبد الناصر، حافظ غلام محی الدین، محمد اجمل شاد، محمد اشفاق نسیم، کاشف شہزاد چوہدری،وحید مراد یوسفی، محمد صدیق گل، بلال کموکا، آصف جاوید اور شہزاد ندیم قیصرنے اپنے مشترکہ بیاں میں کہا ہے کہ نئی حکومت کے پہلے 100دن اور اب 150دن کے بعدبھی سکول ایجوکیشن میں کوئی کام نہ ہوا، کارکردگی صفر ہے۔ افسرشاہی رکاوٹ ہے۔ پنجاب میں 1300سکولز بغیرہیڈ ٹیچرزکے چلائے جا رہے ہیں ۔

ڈائریکٹر پبلک انسٹرکشن ایلمنٹری پنجاب کے دفتر میں سکیل 20کے پانچ ڈائریکٹرز کی سیٹیں عرصہ دراز سے خالی ہیں سکیل 18میں 3500آسامیاں ، سکیل19میں 350آسامیوں،سکیل 20کی 250آسامیوں اور اضلاع میں ہزاروں اساتذہ کی خالی آسامیوں پر ترقی کے لیے رتی بھر کام نہیں ہوا۔ سابقہ حکومت اساتذہ کو ریگولر کرنے کے لیے ایک ایکٹ پاس کر گئی تھی لیکن ہزاروں اساتذہ اور سکیل 17,18کے ہزاروں افسران میں سے کسی ایک کو بھی ریگولر نہیں کیا جا سکا۔

ی آفسر شاہی حیلے بہانوں سے مسائل سے دانستہ چشم پوشی کررہی ہے کم وبیش ایک سال سے اضلاع اور سیکرٹیریٹ میں ایک بھی محکمانہ ترقی کی میٹنگ منعقد نہیں کی گئی ۔ من پسند افراد کی اپنی پوسٹوں پر تعیناتی کی جارہی ہے جن کے کرنے کے لیے صفر کام ہے۔اساتذہ بارہا مراسلہ جات کے ذریعے وزیراعلی ، وزیر تعلیم سکولز اور سیکرٹری سکولز وغیرہ کو مسائل کے حل کے لیے استدعا کر چکے ہیں لیکن اب تک کوئی سنوائی نہیں ہوئی بلکہ ان کے پاس اساتذہ کے لئے وقت نہیں ہے ۔ ان حالات میں مجبور ہو کر یو نائٹڈ ٹیچرز کونسل پنجاب نے اساتذہ کو سڑکوں پر لانے کا فیصلہ کیا ہے۔ جس کے پہلے مرحلے میں 24جنوری کو سول سیکرٹیریٹ مظاہرہ کیا جائے گا اور مسائل حل نہ ہوئے تو کلاسز کے بائیکاٹ اور پیک کے امتحانات کے بائیکاٹ کے آپشنز بھی اختیار کیے جائیں گے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4