کنگ ایڈورڈ میں ایمرجنسی میڈیسن میں پانچ سالہ پروگرام شروع کر دیا گیا ہے، خالد مسعود

کنگ ایڈورڈ میں ایمرجنسی میڈیسن میں پانچ سالہ پروگرام شروع کر دیا گیا ہے، ...

لاہور(سٹی رپورٹر)کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی صوبے کی پہلی پبلک سیکٹر یونیورسٹی ہے جہاں ایمرجنسی میڈیسن میں پانچ سالہ پروگرام شروع کر دیا گیا ہے زیر تربیت طلبہ کیلئے ایمرجنسی فوکس سیمینار کا انعقاد کیا گیا جسمیں برطانیہ اور آسٹریلیا سے آئے ایمرجنسی میڈیسن کے ماہرین نے عملی تربیت دی اور صوبہ میں شعبہ ایمرجنسی میڈیسن کی توسیع کے لئے اقدامات اور سفارشات پر بحث کی۔وائس چانسلر کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیور سٹی پروفیسر خالد مسعود گوندل نے کہا کہ مستقبل میں شعبہ ایمرجنسی میڈیسن میں کے ای ایم یو کے فارغ التحصیل پروسٹ گریجویٹ ڈاکٹرز صوبہ کے دیگر ہسپتالوں میں اس اہم شعبہ کا خلاپورا کریں گے۔ کے ای ایم یو اور میو ہسپتال میں وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد کی ہداہات کے مطابق ایمرجنسی وارڈ میں چوبیس گھنٹے پروفیسر ز کو موجودگی کو یقینی بنا دیا گیا۔ اسی طرح اس نظام کے لاگو ہونے سے دیگر طبی اداروں میں ایمرجنسی وارڈ ز میں پروفیسر ز کی موجودگی یقینی ہو گی۔ اس موقع پرآ سٹر یلیا سے آئے ڈاکٹر عما دقریشی نے کہا کہ شعبہ ایمرجنسی میڈیسن میں جس مہارت کے تحت یوکے، امریکہ ، اسٹریلیا کے ہسپتالوں میں کام کیا جاتا ہے ہماری کوشش ہوگی کہ ہم اسی طرز پر کے ای ایم یو میں تربیتی کورسز کروانے میں کامیاب ہوں تاکہ بین الاقوامی طرز پر مریضوں کاعلاج معالجہ کو ممکن ہو سکے۔ ڈاکٹر فریال وقار جو کہ ایمرجنسی میڈیسن سڈنی اسٹریلیا میں کا م کرتی ہیں نے کہا کہ پاکستان کے ہسپتالوں میں شعبہ ایمرجنسی میڈیسن کی اشد ضرورت ہے۔ ڈاکٹر نادیہ مقبول کا تعلق بھی اسٹریلیا کے شعبہ ایمرجنسی میڈیسن میں ہوتا ہے ان کا کہنا تھا کہ مجھے خوشی ہے اور میں اس بات پر فخر محسوس کرتی ہوں کہ آج کے ای ایم یو میں ایمرجنسی میڈیسن کی ترقی میں اپنا کردار ادا کر رہی ہوں۔ انگلینڈ سے آئے ڈاکٹر ناصر علی نے اپنے خیالات کا اظہا ر کرتے ہوئے کہا کہ یو کے کے اند ایمرجنسی میڈیسن ایک الگ شعبہ کے طور پر کام کر رہا ہے اور مجھے یہ دیکھ کرخوشی محسوس ہوئی کہ کے ای ایم یو پاکستان کی پہلی پبلک سیکٹر یونیورسٹی ہے جسمیں وائس چانسلر کی کاوشوں سے ایمرجنسی میڈیسن کی شروعات ہوئی۔ اس موقع پر پروفیسر اسد اسلم خاں ،چئیرمین شعبہ سرجری، پروفیسر اصغر نقی، ایم ایس میو ہسپتال ڈاکٹر طاہر خلیل ، میڈیکل ڈائریکٹر ڈاکٹر ابرار اشرف ، ڈائریکڑ ایمرجنسی میو ہسپتال ، پروفیسر یار محمد ،پروفیسر ساجد عبیداللہ ، پروفیسر ہارون حامد، پروفیسر امیر افضل ، .ڈینز ، رجسٹرار، فیکلٹی ممبران سمیت زیر تربیت ڈاکٹرز کی کثیر تعداد موجود تھی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1