سابق وفاقی وزیر اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں 30 جنوری تک توسیع

سابق وفاقی وزیر اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں 30 جنوری تک توسیع

  



اسلام آباد (این این آئی)اسلام آبادہائیکورٹ نے غیرقانونی بھرتیوں اور اثاثہ جات کیس میں سابق وفاقی وزیر اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں 30 جنوری تک توسیع کردی جبکہ چیف جسٹس ہائیکورٹ اطہرمن اللہ نے کہا ہے کہ نیب حکام آئندہ سماعت پر مطمئن کریں کہ اکرم درانی کو کیوں گرفتار کرنا چاہتے ہیں۔ بدھ کو اسلام آبادہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کی سربراہمی میں دو رکنی بنچ نے غیرقانونی بھرتیوں اور اثاثہ جات کیس میں اکرم درانی کی ضمانت قبل از گرفتاری کی درخواست پر سماعت کی۔ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ اکرم درانی کیخلاف آمدن سے زائد اثاثوں اور اختیارات کے ناجائز استعمال کا کیس ہے۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا کہ جس کی اتھارٹی ہی نہیں وہ اس کا غلط استعمال کیسے کر سکتا ہے؟وائٹ کالر کرائم میں ملزم تعاون کر رہا ہے تو زیر حراست کیوں رکھنا چاہتے ہیں؟ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا کہ نیب کیس کے تمام ملزموں کو گرفتار کیوں نہیں کرتا؟جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ریمارکس دیئے کہ اکرم درانی نے جن لوگوں کو مبینہ غیرقانونی نوکریاں دیں وہ ابھی بھی اپنے عہدے پر ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اگر نوکریاں غیرقانونی تھی تو پھر حالیہ وزیر ہاؤسنگ کو بھی گرفتار کیا جانا چاہیے،وزیر ہاؤسنگ نے ان لوگوں کو نوکریوں سے ابھی تک بھی نہیں نکالا۔ چیف جسٹس ہائیکورٹ نے ریماکس دیئے آئندہ سماعت پر مطمئن کریں کہ اکرم درانی کو کیوں گرفتار کرنا چاہتے ہیں، عدالت نے تفتیشی افسر کو تیاری کیلئے مزید وقت دیتے ہوئے اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں 30 جنوری تک توسیع کردی۔

اکرم درانی

مزید : صفحہ آخر


loading...