فیس بک پر تصاویر بھیجنے والی لڑکیاں اور خواتین نالائق ہوتی ہیں

فیس بک پر تصاویر بھیجنے والی لڑکیاں اور خواتین نالائق ہوتی ہیں

شکاگو (نیوز ڈیسک) فیس بک کا استعمال آج کل کے نوجوانوں کا محبوب مشغلہ بن چکا ہے اور اس ویب سائٹ پر تصویریں بھیجنا تو بہت ہی پسند کیا جاتا ہے۔ ان تصویروں پر تحقیق کرنے کے بعد سائنسدانوں نے معلوم کیا ہے کہ جن لڑکیوں اور خواتین کو فیس بک پر اپنی فحش تصاویر بھیجنے کا شوق ہوتا ہے وہ عموماً نالائق ہوتی ہیں اور حقیقی زندگی میں جسمانی اور ذہنی طور پر دوسری لڑکیوں اور خواتین سے کم پرکشش ہوتی ہیں۔ یہ تحقیق اوری گن سٹیٹ یونیورسٹی کی ٹیم سائنسدان پروفیسر الزبتھ ڈینیلز اور ان کی ٹیم نے کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا پر غیر اخلاقی تصویر یں بھیجنے والی لڑکیاں اور خواتین واضح طور پر ذہنی پستی اور منفی شخصیت کی حامل ہوتی ہیں اور وہ عام خواتین کی نسبت احساس کمتری کا بھی زیادہ شکار ہوتی ہیں۔ تحقیق میں پروفیسر الزبتھ نے فیس بک پر ایک 20 سالہ لڑکی کے دو مختلف اکاؤنٹ بنائے جن میں فرق صرف تصویروں کا تھا۔ ایک اکاؤنٹ کی تصاویر میں امینڈا نامی لڑکی نے حیادار لباس پہن رکھا تھا جبکہ دوسرے اکاؤنٹ میں بھیجی گئی تصاویر میں امینڈا نے فحش لباس پہن رکھا تھا۔ اس کے بعد 58 نوعمر لڑکیوں اور 60 جوان عورتوں کو اس فرق سے آگاہ کئے بغیر امینڈا کے اکاؤنٹ کو استعمال کروایا گیا اور اس کے بارے میں ان کی رائے لی گئی۔ تمام لڑکیوں اور خواتین نے حیا دار لباس والی امینڈا کو زیادہ خوبصورت، پسندیدہ اور قابل قرار دیا جبکہ فحش لباس والی امینڈا کو سب نے کم خوبصورت، ناپسندیدہ اور نالائق قرار دیا۔ واضح رہے کہ اس تحقیق میں فحش تصاویر والی لڑکیوں کے بارے میں مردوں کی رائے معلوم نہیں کی گئی۔ یہ تحقیق ’’سائیکالوجی آف پاپولر میڈیا کلچر‘‘ نامی سائنسی جریدے میں شائع ہوئی ہے۔

مزید : صفحہ آخر