چھ گھنٹوں کی جنگ بندی کے بعد اسرائیلی بربریت دوبارہ شروع،مزید چھ فلسطینی شہید، ایک لاکھ غزہ مکینوں کوعلاقہ خالی کرنے کا حکم

چھ گھنٹوں کی جنگ بندی کے بعد اسرائیلی بربریت دوبارہ شروع،مزید چھ فلسطینی ...
چھ گھنٹوں کی جنگ بندی کے بعد اسرائیلی بربریت دوبارہ شروع،مزید چھ فلسطینی شہید، ایک لاکھ غزہ مکینوں کوعلاقہ خالی کرنے کا حکم

  

مقبوضہ بیت المقدس(مانیٹرنگ ڈیسک) اسرائیل نے مصر کی تجویز پر چھ گھنٹے کی جنگ بندی کے بعد ایک مرتبہ پھر غزہ پر بمباری شروع کردی ہے اور تازہ کارروائیوں میں مزید چھ فلسطینی شہید ہوگئے جبکہ اسرائیلی فوج نے شمالی غزہ کے ایک لاکھ مکینوں کو علاقہ چھوڑنے کاحکم دیدیا ،اسرائیلی وزیراعظم کاکہناتھاکہ حماس نے جنگ کا انتخاب کیا، اُسے بھاری قیمت چکاناہوگی جبکہ نہتے فلسطینیوں پراسرائیلی جارحیت کیخلاف پاکستان سمیت دنیا بھرمیں احتجاجی مظاہرے کیے جارہے ہیں ۔

تفصیلات کے مطابق مصر کی جنگ بندی اور قاہرہ میں مذاکرات کی پیشکش پر چھ گھنٹے کی جنگ بندی کے بعد اسرائیلی فورسز نے ایک مرتبہ پھر غزہ میں بمباری شروع کردی ہے ۔جنوبی علاقوں میں بمباری سے چار افراد جبکہ رفاہ میں ایک گھر پر بمباری سے مزید دوفلسطینی شہید ہوگئے ہیں جس کے بعد مجموعی طورپرشہادتوں کی تعداد209ہوگئی ہے ۔

اسرائیلی فوج کی بربریت کے نتیجے میں اب تک فلسطینیوں کے سینکڑوں گھر ملیا میٹ ہوگئے ہیں جبکہ اسرائیلی فوج نے شمالی غزہ کے ایک لاکھ مکینوں کوعلاقہ چھوڑنے کا حکم دیدیا۔

اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہوکاکہناتھاکہ حماس نے جنگ کا انتخاب کیاجسے اس کی بھاری قیمت چکاناہوگی ، سرحد پر تعینات فوج کسی بھی وقت غزہ میں زمینی کارروائی کرسکتی ہے ۔

دوسری طرف پاکستان سمیت دنیاکے مختلف ممالک میں اسرائیلی جارحیت اور غزہ میں معصوم شہریوں کی ہلاکتوں کیخلاف احتجاج جاری ہے ۔ پاکستان میں کراچی اور سکھر کے وکلاءنے عدالتوں کا بائیکاٹ اور فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی کیلئے ریلیاں نکالیں ۔ طلباءنے بھی احتجاج کیا۔ مظاہرین نے مطالبہ کیاکہ اقوام متحدہ اسرائیل کی رکنیت ختم کرے اوراس کے خلاف جنگی جرائم کے مقدمات قائم کرے ۔

مزید : بین الاقوامی /Headlines