ناسا کائنات میں نئی مخلوق تلاش کرے گا

ناسا کائنات میں نئی مخلوق تلاش کرے گا
ناسا کائنات میں نئی مخلوق تلاش کرے گا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

نیویارک (نیوز ڈیسک) کیا ہم اس دنیا میں اکیلے ہیں، یا کائنات کے کسی گوشتے میں ہمارے جیسی کوئی اور مخلوق بھی پائی جاتی ہے؟ یہ وہ سوال ہے جس کی تلاش حضرت انسان کو روز اول سے رہی ہے۔ اب اس سوال کا جواب امریکی خلائی تحقیق کے ادارے ناسا نے بڑی حد تک دے دیا ہے۔ ناسا کا کہنا ہے کہ یقیناً کائنات میں ہمارے علاوہ بھی زندگی پائی جاتی ہے اور امید ہے کہ اگلے 20 سال کے دوران ہم اپنے نظام شمسی سے باہر کسی سیارے پر بسنے والی مخلوقات کو ڈھونڈ نکالیں گے۔ ہمارے نظام شمسی میں زندگی کی تلاش کئی دہائیوں سے جاری ہے لیکن ابھی تک زمین کے علاوہ کسی سیارے یا اس کے کسی چاند پر زندگی کے آثار نہیں ملے، سائنسدانوں کا خیال ہے کہ ہمارے نظام شمسی کے باہر کوئی ہمارے جیسا سیارہ ہوسکتا ہے۔ ہمارے کہکشاں میں اربوں ستارے ہیں اور سائنسدانوں کے حساب کے مطابق کہکشاں میں 10 کروڑ سے زائد ایسے سیارے ہوسکتے ہیں کہ جن پر زندہ مخلوقات بستی ہیں۔ ایم آئی ٹی کی پروفیسر سارہ سیگر کا کہنا ہے کہ ہر نظام شمسی میں کم از کم ایک ایسا سیارہ ہوسکتا ہے کہ جس پر زندگی مل سکے۔ ناسا کے ایڈمنسٹریٹر چارلس بولڈن کا کہنا ہے کہ 2017ءمیں ایک جدید سیٹلائٹ اور 2018ءمیں ایک خلائی دوربین کو کائنات کی وسعتوں میں زندگی تلاش کرنے کےمشن پر بھیجا جائے گا جس کے نتیجہ میں ہماری کہکشاں میں ہمارے علاوہ زندگی دریافت ہونے کی قوی امید ہے۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی