لاٹری جیتنے والی کم عمر ترین لڑکی نے اس رقم سے ایسا کیا کام کیا کہ انٹرنیٹ صارفین غصہ سے آگ بگولہ ہوگئے؟ شائد آپ کو بھی پسند نہ آئے

لاٹری جیتنے والی کم عمر ترین لڑکی نے اس رقم سے ایسا کیا کام کیا کہ انٹرنیٹ ...
لاٹری جیتنے والی کم عمر ترین لڑکی نے اس رقم سے ایسا کیا کام کیا کہ انٹرنیٹ صارفین غصہ سے آگ بگولہ ہوگئے؟ شائد آپ کو بھی پسند نہ آئے

  

لندن (نیوز ڈیسک) ’’دولت آپ کی کلاس نہیں بدل سکتی‘‘ یہ مقولہ برطانوی لڑکی جین پارک پر صادق آتا ہے جس نے 17 سال کی کمسنی میں کروڑوں کی لاٹری جیتی لیکن ا س کے شوق مشکوک شہرت والی جگہوں کی سیر اور نسوانی حسن میں اضافے کی کوششوں سے آگے نہ بڑھ سکے۔

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کے پروگرام "Teenage Millionaire" میں جب جین پارک کی قسمت بدلنے اور پھر اس کی عیاشیوں کی تفصیلات دکھائی گئیں تو سوشل میڈیا پر ان کے خلاف نفرت انگیز تبصروں کا طوفان آگیا۔ جین پارک نے انکشاف کیا کہ 10 لاکھ برطانوی پاؤنڈ (تقریباً 15 کروڑ پاکستانی روپے) کی لاٹری جیتنے کے بعد انہوں نے ایک نیا گھر خریدا، ڈھیروں شاپنگ کی اور اپنی 18 ویں سالگرہ شان و شوکت کے ساتھ منائی۔ ان کا کہنا تھا کہ انہیں سالگرہ کی موج مستی اچھی طرح یاد نہیں کیونکہ وہ کثرت شراب نوشی کی وجہ سے مدہوش ہوگئی تھیں۔ جین نے یہ بھی بتایا کہ وہ سپین کے بدنام زمانہ تفریحی مقام میگا لوف کی سیر کو گئیں اور وہاں ایک شراب خانے اور فحاشی کے اڈے پر کام بھی کرتی رہیں۔ انہوں نے بھاری رقم نسوانی حسن میں اضافے پر بھی خرچ کی۔

مزید پڑھیں:وہ آدمی جس نے اپنی موت کا ڈرامہ رچایا تاکہ دیکھ سکے اس کے جنازے پر کتنے قریبی دوست آتے ہیں، نتیجہ ایسا نکلا کہ وہ کبھی تصور بھی نہ کرسکتا تھا

جین پارک کے انکشافات پر سوشل میڈیا صارفین نے ان پر سخت تنقید کی۔ اکثر کا کہنا تھا کہ یہ سچ ہے کہ د ولت انسان کو اخلاقیات، دوستی اور محبت کی نعمتیں نہیں دے سکتی۔ ایک صارف کا کہنا تھا کہ جین پارک کی زندگی اس مقولے کی عملی شکل ہے کہ ’’دولت انسان کی کلاس نہیں بدل سکتی۔‘‘

جین پارک نے پروگرام میں خود بھی تسلیم کیا کہ دولت سے محبت، دوستی اور اپنائیت نہیں خریدی جاسکتی، لیکن ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ڈھیروں دولت آنے کے بعد انہوں نے وہ سب کیا جس کا پہلے وہ تصور بھی نہیں کرسکتی تھیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -